کتاب: سہہ ماہی مجلہ البیان کراچی - صفحہ 112
صبر: [یٰبُنَیَّ اَقِمِ الصَّلٰوةَ وَاْمُرْ بِالْمَعْرُوْفِ وَانْہَ عَنِ الْمُنْکَرِ وَاصْبِرْ عَلٰی مَآ اَصَابَکَ ۭ اِنَّ ذٰلِکَ مِنْ عَزْمِ الْاُمُوْرِ 17۝ۚ][لقمان:17] ترجمہ: ’’ بیٹا نماز کی پابندی رکھنا اور (لوگوں کو) اچھے کاموں کے کرنے کا امر اور بری باتوں سے منع کرتے رہنا اور جو مصیبت تجھ پر واقع ہو اس پر صبر کرنا، بےشک یہ بڑی ہمت کے کام ہیں‘‘۔ غرور تکبر سے بچانا: [وَلَا تُصَعِّرْ خَدَّکَ لِلنَّاسِ وَلَا تَمْشِ فِی الْاَرْضِ مَرَحًا ۭ اِنَّ اللّٰہَ لَا یُحِبُّ کُلَّ مُخْـتَالٍ فَخُــوْرٍ 18؀ۚ] ترجمہ: ’’اور (از راہ غرور) لوگوں سے گال نہ پھلانا اور زمین میں اکڑ کر نہ چلناکہ اللہ تعالیٰ کسی اترانے والے خود پسند کو پسند نہیں کرتا‘‘۔[لقمان:18] دھیمی آواز: [وَاقْصِدْ فِیْ مَشْیِکَ وَاغْضُضْ مِنْ صَوْتِکَ ۭ اِنَّ اَنْکَرَ الْاَصْوَاتِ لَصَوْتُ الْحَمِیْرِ 19؀ۧ][لقمان:19] ترجمہـ:’’ اور اپنی چال میں اعتدال کیےرہنا اور (بولتے وقت) آواز نیچی رکھنا کیونکہ ( اونچی آواز گدھوں کی سی ہے اور کچھ شک نہیں کہ) سب سے بری آواز گدھوں کی ہے‘‘۔ خلاصہ کلام: رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا فرمان مبارک ہے۔ آدمی کے گنہگار ہونے کے لیےیہ بات ہی کافی ہے کہ وہ اپنے اہل و عیال کو ضائع کردے۔ جس طرح اولاد کے لیے ماں باپ کے ساتھ حسن سلوک کا متعدد بار حکم ہے اسی طرح والدین کے لیے بھی اولاد کی صحیح منہج پر تربیت کرنا لازم و ملزوم ہے ضرورت اس امر کی ہے کہ شریعت کے مطابق اپنی اولاد کی تربیت کرتے ہوئے ایک اسلامی معاشرہ قائم کریں۔ درود و سلام ہوںمحمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم پر جنہوں نے بحیثیت والد یہ کردار عملاً کرکے ہی نہیں دکھایا بلکہ بحیثیت نبی امت کے والد بن کر بھی عملاً تربیت کر کے دکھائی اور تمام تعریفیں اللہ رب العالمین کے لیے جو تمام جہانوں کا مالک ہے عزت و ذلت کے تمام اختیار اس کے ہاتھ میں ہیں۔ سبحان اللہ وبحمدہ سبحان اللہ العظیم