کتاب: سہہ ماہی مجلہ البیان کراچی - صفحہ 42

ہے تو اس کا مطلب یہ ہے کہ انکار حدیث کا فتنہ سرے سے موجود ہی نہیں ہے اور فتنہ انکارِ حدیث کا جو شورو غوغا ہے وہ یوں ہی ہے ۔ حقیقت میں کوئی بھی منکرِ حدیث نہیں ہے۔ انکارِ حدیث کا مطلب اور اس کا مصداق: لیکن کیا واقعتاً ایسا ہی ہے ۔ نہیں ہر گز نہیں ۔ انکارِ حدیث کا فتنہ اپنی پوری حشر سامانی کے ساتھ نہ صرف موجود ہے بلکہ روز افزوں اور وسعت پذیر ہے۔ اس لئے ہمیں غور کرنا ہوگا کہ انکارِ حدیث کا مطلب کیا ہے ؟ اور اسکا مصداق کون یا کون کون ہیں؟ گمراہ فرقوں اور ان کی گمراہیوں کا علیٰ وجہ البصیرت جائزہ لینے کے بعد ہم اس نتیجے پر پہنچے ہیں کہ مسلّمہ اصلاحات کو ان کے مسلّمہ مفہوم کے مطابق ماننے کے بجائے ، ان کے مفہوم میں تبدیلی کرنا اور اپنے ذہنی تحفظات یا خود ساختہ نظریات اور باطل مزعومات کی روشنی میں ان کا نیا مفہوم گھڑنا ، یہ ان کی گمراہی کی اصل بنیاد ہے اور اس فن کا رانہ چابکدستی سے وہ بہت سے لوگوں کو یا کم از کم اپنے حلقہ ارادت کو یہ باور کروا دیتے ہیں کہ وہ ان چیزوں (مسلمات) کے منکر نہیں ہیں جو ان اصطلاحات کا متبادر مفہوم ہے، یا اگر وہ ان کے منکر ہیں تو اس کی وجہ وہ احادیث ہیں جو قرآن کے خلاف ہیں ۔جیسے پرویزی گروہ ہے جس نے صلاۃ و زکوٰۃ کے مسلّمہ مفہوم کو بدل کر ان کا ایک نیا مفہوم گھڑا جس کی بنیاد حدیث کے بجائے سنت پر ہے۔ ذرا ملاحظہ فرمائیں ، غلام احمد پرویز لکھتا ہے : ’’الصلوٰۃ ، صراطِ مستقیم پر چلنے کا نام ہے ، وہ صراط جس کے بارے میں فرمایا کہ انّ ربّی علیٰ صراطٍ مّستقیم ـ’’ تیرے نشونما دینے والے کا قانون ربوبیت ، خود متوازن راہ پر چل رہا ہے ‘‘ اس کے پیچھے پیچھے تم بھی چلتے جاؤ۔ مُصلِّی، اس گھوڑے کو کہتے ہیں جو گھوڑا دوڑ میں پہلے گھوڑے کے بالکل پیچھے پیچھے ہو، جو اِدھر اُدھر کی راہوں میں نکل جائے وہ مُصلِّی نہیں‘‘ یہ اقتباس لغت کے بَل پر تفسیر کرنے کا شاہکار ہے۔ پہلے اِنّ ربّی علیٰ صراطٍ مُّستقیم کا سیدھا ترجمہ: (میرا رب سیدھے راستے پر ہے ) چھوڑ کر ’’لغوی ترجمہ ‘‘ملاحظہ ہو:’’تیرے نشونما دینے والے کا قانون ربوبیت ، خود متوازن راہ پر چل رہا ہے‘‘ یہ ترجمہ لغوی ہے یا نہیں ؟ تاہم فکر پرویزی یا حیلہ پرویزی کا پورے طور پر غماز ہے کیونکہ اسی پرویزی مفہوم پر ’’الصلوٰۃ ‘‘ کا لغوی مفہوم متفرع ہے۔ چنانچہ اس کے بعد ہے : ’’اس کے پیچھے پیچھے تم بھی چلتے جائو‘‘ ، اس کے بعد حاصل مراد ملاحظہ ہو: ’’ مُصلِّی، اس گھوڑے کو کہتے ہیں جو گھوڑا دوڑ میں پہلے گھوڑے کے بالکل پیچھے پیچھے ہو‘‘، لیکن مُصلِّی کے معنی (نماز پڑھنے والا) نہیں بلکہ پیچھے پیچھے چلنے والے گھوڑے کے ہیں۔ اور جس’’قانون ربوبیت ‘‘ کے پیچھے پیچھے چلنا ہے ، وہ کیا ہے؟ کمیونسٹ نظام ، یا سوشلزم ہوگااور مُصلِّی (نماز پڑہنے والے ) سے مراد ہے جو اس نظام کے پیچھے پیچھے چلے گا۔

  • فونٹ سائز:

    ب ب