کتاب: سہہ ماہی مجلہ البیان کراچی - صفحہ 56

اور ان کے مختلف طریقہ ہائے علاج کی وجہ سے ہے ۔ یہیں سے ہمارے سامنے بعض معالجین کی ناکامی کی اصل وجہ کھل کر سامنے آجاتی ہےکہ وہ ہر قسم کے امراض وعلامات سے صرف ایک ہی طریقہ ( جو ماردھاڑ کا ہوتاہے ) سے نبٹنے کی کوشش کرتے ہیں ۔ (3)قرآن ہر چیز کا علاج ہے : دوا اور علاج میں بنیادی بات یہ ہے کہ وہ قرآن مجید سے ہونا چاہیے ۔ پھر دوسرے نمبر پر مروج داؤں کے ساتھ ۔ ( یہ محض روحانی امراض میں نہیں ) بلکہ جسمانی امراض میں بھی اسی چیز کو ملحوظ خاطر رکھا جائے ، نہ کہ جیسا بعض جاہل معالجین یہ سمجھتے ہیں کہ اگر کسی فرد کی بیماری کا تعلق جسمانی عضو سے ہے تو وہ ہسپتالوں سے رجوع کرے ، اور جس کو نفسیاتی مرض لاحق ہے وہ نفسیاتی کلینک اور ماہرین نفسیات سے رجوع کرے ۔ اور اگر کوئی روحانی بیماری میں مبتلا ہے تو اس کا علاج دم ، ادعیہ اور قرآن سے کیا جاتاہے ۔ یہ بات سمجھ سے بالاتر ہے کہ یہ لوگ اس طرح کی تقسیم کس بنیاد پر کرتے ہیں ؟ جبکہ قرآن دلوں کا علاج اور اس کی دوا ہے ، اور جسموں کی سلامتی اور اس کی شفا ہے ۔ فرمان باری تعالیٰ ہے :{ وَنُنَزِّلُ مِنَ الْقُرْآنِ مَا هُوَ شِفَاءٌ } [الإسراء: 82] ترجمہ : ’ ’ یہ قرآن جو ہم نازل کر رہے ہیں مومنوں کیلئے تو سراسر شفا اور رحمت ہے ‘‘۔ یہاں لفظ ِ ’’ شفا ء‘‘ پر غور کریں ، اللہ تعالیٰ نے یہ نہیں کہا کہ قرآن ’’ دوا ‘‘ ہے ۔ بلکہ یہ کہا کہ یہ ’’شفاء‘‘ ہے ۔ کیونکہ شفا دوا کا ظاہری اور حتمی نتیجہ ہے ۔ جبکہ دوا میں یہ احتمال پایا جاتاہے کہ ہوسکتاہے وہ شفا یاب کرے یا نہ کرے ؟ علامہ ابن قیم رحمہ اللہ اپنی کتاب ’’ زاد المعاد ‘‘ میں لکھتے ہیں :’’ قرآن مجید ہر قسم کی دلی اور جسمانی، دنیاوی واخروی بیماریوں کا مکمل علاج ہے۔ لیکن ہر کسی کو قرآن سے شفاء حاصل کرنے کی اہلیت اور توفیق نصیب نہیں ہوتی ۔ اگر بیمار شخص اس قرآن سےدوا کا حصول اچھے طریقے سے کرے اور اپنی بیماری پر مرہم مکمل سچائی ، ایمان ، مکمل قبولیت اور اعتقاد کامل وجازم اور شرائط کی تکمیل کے ساتھ رکھے تو اس کا مقابلہ کبھی بھی کوئی بیماری نہیں کرسکتی ۔ اوریہ ہوبھی کیسے سکتاہے کہ بیماریاں رب سماء وارض کے کلام کا مقابلہ کرسکیں ؟! ایسا کلام کہ اگر وہ پہاڑوں پر نازل ہوتا تو انہیں ریزہ ریزہ کردیتا، اور اگر زمین پر نازل ہوتا تو اسے چیر دیتا ۔ لہٰذا دلوں اور جسموں کی کوئی بھی بیماری ہو مگر قرآن میں اس کا علاج اور اس کے سبب پر دلالت ورہنمائی موجود ہے ۔ تو جسے قرآن شفاء نہ دے سکے اللہ اسے کبھی شفاء نہ دے ، اور جسے قرآن کافی نہ ہو اسے اللہ بھی کافی نہ ہو۔‘‘ لہٰذا قرآن مجید سے علاج کرتے وقت یقینِ کامل ، اور اللہ تعالیٰ سے حسنِ ظن رکھنا بہت ضروری ہے ۔ کیونکہ بیمار کے دوا سے فائدہ اٹھانے کی بنیادی شرط ہی یہ ہے کہ وہ اسے قبول کرے اور اس سے فائدہ حاصل ہونے کا اعتقاد رکھے‘‘ ۔ 

  • فونٹ سائز:

    ب ب