کتاب: انوار المصابیح بجواب رکعات تراویح - صفحہ 121

خاص وجہ عیسیٰ کے تفرد کو قرار دیا ہے ۔ چنانچہ لکھتے ہیں : ’’ بالخصوص جب کہ حضرت جابر رضی اللہ عنہ سے اس بات کو نقل کرنے میںوہ متفرد ہے دوسرا کوئی اس کا موید و متابع موجود نہیں ہے ، نہ کسی دوسرے صحابہ کی حدیث اس کی شاہد ہے ‘‘۔ (رکعات ص۲۸) اصول حدیث سے ادنیٰ لگاؤ رکھنے والے بھی جانتے ہیں کہ راوی کے تفرد کی مختلف صورتیں ہیں اور رد و قبول کے اعتبار سے ان کے احکام بھی مختلف ہیں ۔ نہ ہر تفرد مقبول ہے اور نہ ہر تفرد مردود ۔ اس لئے اس موقع پر سب سے پہلے ان دو باتوں کی تنقیح ضروری ہے ۔ ایک یہ کہ عیسیٰ کے تفرد کی صورت کیا ہے ؟ دوسری یہ کہ تفرد کی یہ صورت عند المحدثین مقبول ہے یا مردود ؟ پہلی تنقیح کے جواب کے لئے ص ۲۶ و ص۲۷ کو پڑھئیے ۔ مولانا مئوی نے بڑی وضاحت سے یہ تسلیم کیا ہے کہ رمضان میں آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی نماز باجماعت کے راوی بہت سے صحابہ ہیں اور ان صحابہ سے اس بات کو نقل کرنے والے ان کے بہت سے شاگرد ہیں ۔ اتنی بات میں تو حضرت جابر رضی اللہ عنہ اور ان کے شاگرد عیسیٰ کے بیان میں اور دوسرے صحابہ رضی اللہ عنہ اور ان کے شاگردوں میں کوئی اختلاف نہیں ہے ۔ اختلاف ہے تو صرف اس بات کا کہ حضرت جابر رضی اللہ عنہ کے علاوہ دوسرے صحابہ رضی اللہ عنہ اور ان کے شاگردوں نے ان رکعتوں کی تعداد نہیں بتائی جو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے ان راتوں میں پڑھی تھیں اور حضرت جابر رضی اللہ عنہ اور ان کے شاگرد عیسیٰ کی روایت میں ان رکعتوں کی تعداد کا بھی بیان ہے ۔ گویا عیسیٰ کے تفرد کی صورت یہ ہے کہ اس نے ایک ایسی بات بیان کی ہے جس کے بیان سے دوسرے راوی ’’ ساکت‘‘ ہیں۔ ظاہر ہے کہ ’’ سکوت‘‘ اور

  • فونٹ سائز:

    ب ب