کتاب: انوار المصابیح بجواب رکعات تراویح - صفحہ 124

اس کلام کا حاصل یہ ہے کہ ’’ اگر دو ثقہ راویوں میں کسی بات کے ذکر اور عدم ذکر کا اختلاف ہو (جیسے یہاں رکعات کی تعداد کے ذکر اور عدم ذکر کا اختلاف ہے) تو ان دونوں روایتوں کے مضمون میں اگر ایسی مخالفت او رمنافات ہو کہ ایک روایت کے ماننے سے دوسری روایت کی تردید و تکذیب لازم آئے تو اس صورت میں جو روایت وجوہ ترجیح کے اعتبار سے راجح ہو گی وہ مقبول ہو گی اور مرجوح غیر مقبول ہ و گی ۔ اور اگر ان دونوں روایتوں میں اختلاف کی یہ صورت نہ ہو تو راجح مرجوح کا مقابلہ کیے بغیر ثقہ راوی کی زیادتی مقبول ہو گی ‘‘ ۔ جب یہ ثابت ہو چکا کہ عیسیٰ ثقہ راوی ہے اور اس کے بیان میں اور دوسرے راویوں کے بیان میں کوئی منافات نہیں ہے ۔ اس لئے کہ اگر بہت سے لوگ یہ کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے رمضان کی راتوں میں باجماعت نمازیں پڑھی تھیں اور ایک شخص یہ کہتاہے کہ یہ نمازیں آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے آٹھ رکعات (بلا وتر) پڑھی تھی تو ان دونوں بیانوں میں کیامنافات اور تعارض ہے؟ پس حافظ ابن حجر رحمہ اللہ کے بیان کے مطابق عیسیٰ کی یہ ’’ زیادۃ‘‘ راجح اور مرجوح کا مقابلہ کیے بغیر مقبول ہو گی اور اس ’’ زیادۃ‘‘ میں اس کا متفرد ہونا ہر گز اس کی روایت کے لئے کسی قدح کا موجب نہیں ہے ۔ یہ کہنا بھی غلط ہے کہ اس حدیث کا کوئی شاہد نہیں ہے ۔ حضرت عائشہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کی روایت ما کان یزید فی رمضان ولا فی غیره علی احدی عشرةرکعة اس کی شاہد ہے ۔ اور اگر بالفرض کوئی شاہد یا متابع نہ بھی ہو تو محض متابع اور شاہد کا نہ ہونا بھی کوئی قدح کی بات نہیں ۔ جب تک اس کے ساتھ دوسرے وجوہ قادحہ موجود نہ ہوں ۔

  • فونٹ سائز:

    ب ب