کتاب: انوار المصابیح بجواب رکعات تراویح - صفحہ 226

ہے اور یہ بات یہاں مفقود ہے (اس لئے ایسے راوی کی حدیث مقبول نہیں ہو گی) صحیحین میں کوئی ایک راوی بھی ایسا نہیں ہے جس کا ترجمہ اسماء الرجال کی کتابوں میں نہ ملتا ہو ۔ اس لئے ابو عثمان بصری کو صحیحین کے راوی کے ساتھ تشبیہ دینا سراسر مغالطہ ہے یا افسوسناک جرأت ۔ ابن فنجویہ پر بحث کے ذیل میںہم اچھی طرح ثابت کر چکے ہیں کہ صحیحین کا ہر وہ راوی جس سے شیخین نے احتجاجًا و اصالۃً تخریج کیا ہے جمہور امت کے نزدیک معروف العدالۃ ہے ۔ صحیحین کے راوی پر دوسرے راویوں کا قیاس کرنا محدثین کی تصریحات سے ناواقفیت کی دلیل ہے ۔ مولانا مئوی نے ایک بات یہ بھی لکھی ہے کہ معرفۃ السنن کی اس روایت کا ضعف سنن کبریٰ والی روایت سے دفع ہو جائے گا ۔ کیونکہ تعدد طرق سے روایت کا ضعف دور ہو جاتا ہے ۔ (رکعات ص۴۹) لیکن مولانا کو معلوم ہونا چاہئیے کہ تعدد طرق سے وہ ضعف دور ہوتا ہے جو معمولی درجہ کا ہو ۔ ہر ضعف تعدد طرق سے دور نہیں ہوتا ۔ حافظ ابن الصلاح فرماتے ہیں : لیس کل ضعف فی الحدیث یزول بمجیئہ من وجوہ بل ذلک یتفاوت فمنہ یزیلہ ذلک بان یکون ………ان قال ومن ذلک ضعف لا یزول بنحو ذلک لقوۃ الضعف وتقاعد ھ الجابر عن جبرہ ومقاومتہ ۔ (مقدمہ ص۱۴) جب ضعف کے انجبار اور عدم انجبار کا معاملہ درجات ضعف کے فیصلے پر موقوف ہے تو ظاہرہے کہ یہ اسی وقت ممکن ہے جب راوی کے ترجمہ اور حالات کا علم ہو ۔ جس راوی کا کچھ حال ہی معلوم نہ ہو کہ وہ ثقہ ہے یا ضعیف ؟ اگر ضعیف ہے تو کس درجہ کا ضعیف ہے اور وجۂ ضعف کیا ہے ؟ اس کے متعلق یہ کیسے فیصلہ

  • فونٹ سائز:

    ب ب