کتاب: انوار المصابیح بجواب رکعات تراویح - صفحہ 23

لئے سند صحیح تلاش کرتے ہیں ۔ اور فقہاء اپنے آپ کو اہل الرائ کہتے ہیں ، کیونکہ یہ لوگ رائے پرعمل کرتے ہیں اور خبر واحد کو چھوڑ دیتے ہیں ۔ ان کے نزدیک اپنی درایت پر عمل کرنا جائز ہے اگرچہ اس کے خلاف ثقہ راویوں کی روایت (خبر واحد) موجود ہو ، لیکن یہ محدثین (اہل حدیث) کے نزدیک یہ جائز نہیں ۔ حضرت ابن عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے ایک شخص نے ایک مسئلہ دریافت کیا ۔ انہوں نے جواب دیا اس پر سائل نے یہ معارضہ کیا کہ حضرت ابن عباس رضی اللہ تعالیٰ عنہ تو اس کے خلاف کہتے ہیں ۔ حضرت ابن عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے اپنے جواب کے ثبوت میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی حدیث پیش کی اور اس کے بعد فرمایا کہ بتاؤ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی بات مانو گے یا ان کے مقابلہ مین ابن عباس رضی اللہ عنہ کی ؟ یاد رکھو ! اگر تم سچے مومن ہو تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی سنت کی اتباع کو دوسروں کی سنت پر مقدم جانو ۔ الفاظ یہ ہیں ۔ فیقول رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وسلم احق ان تاخذ او بقول ابن عباس ان کنت صادقا وفی روایة فسنة الله وسنة رسوله احق ان تتبع من سنة فلان ان کنت صادقاً (مسلم شریف جلد اوّل ص۴۰۵) حضرت عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہ کے بیٹے عبداللہ نے اپنے باپ سے نقل کرتے ہوئے صحابہ کا عمل بیان کیا کہ نویں ذی الحجہ کو منیٰ سے عرفات جاتے ہوئے بعض

  • فونٹ سائز:

    ب ب