کتاب: انوار المصابیح بجواب رکعات تراویح - صفحہ 302
حافظ زین الدین عراقی لکھتے ہیں : اختلف العلماء فی قبول روایة المجہول وہو علی ثلاثہ اقسام العین ومجہول الحال ظاہر او باطنا و مجہول الحال باطنا ۔ القسم الاول مجہول العین وہو من لم یرو عنہ الا راو الواحد و فیہ اقوال الصحیح الذی علیہ اکثر العلماء من اہل الحدیث وغیرہم انہ لا یقبل والثانی یقبل مطلقا … والقسم الثانی مجہول الحال فی العدالة فی الظاہر والباطن مع کونہ معروف العین بروایة عدلین عنہ و فیہ اقوال احدہا وہو قول الجماہیر کما مکا ابن الصلاح ان روایتہ مقبولة والثانی تقبل مطلقا … والقسم الثالث مجہول العدالة الباطنة وہو عدل فی الظاہر فہذا یحتج بہ بعض من رد القسمین الاولین … ولما ذکر ابن الصلاح ہذا القسم الا خیر قالا ہو المستور فقد قال بعض ائمتنا المستور من یکون عدلا فی الظاہر ولا تعرف عدلتہ باطنا انتہی کلامہ وہذالذی نقل کلامہ اخر ولم یسمہ ہو البغوی انتہی ۔ (فتح المغیث للعراقی از ص ۲۲ تا ۲۵ من الجز الثانی) ۔ حافظ ابن کثیر لکھتے ہیں : مجہولة العدالة ظاہر او باطنا لا تقبل روایتہ عند الجماہیر ومن جہلت عدالتہ باطنا ولکنہ عد فی الظاہر وہو المستور فقد قال بقبولہ بعض الشافعیین و رجح ذلک سلیم بن ایوب الفقیہ و وانقہ ابن الصلاح انتہی (الباعث الحثیث ص ۳۰) ۔