کتاب: انوار المصابیح بجواب رکعات تراویح - صفحہ 304
اور ان دونوں کا نام مستور نہیں ہے جیسا کہ ابن الصلاح وغیرہ کی عبارتوں میں اس کی صراحت موجود ہے شرح نخبہ کے محشی نے بھی اس پر متنبہ کر دیا ہے ۔ چنانچہ حاشیہ میں ہے : الظاہر انہ ادرج فیہ قسمی المجہول الحال و سمی کلا منہما مستور او ان کان ابن الصلاح وغیرہ سہی الاخیر مستور الوجود المستر فی کل منہما وہما مجہول العدالة الظاہرة والباطنة ومجہول العدالة الباطنة دون الظاہرة والمراد بالباطنة ما فی نفس الامر وہی التی ترجیع الی اقوال المزکین وبالظاہرة ما یعلم من ظاہر الحال انتہی (شرح نخبہ ص ۷۱ حاشیہ ص ۲) یہ حاشیہ چونکہ مولانا مئوی کے مقصد کے خلاف تھا اس لئے انہوں نے جان بوجھ کر اس سے آنکھیں بند کر لیں ۔ یہ حاشیہ ملا علی قاری کی شرح سے ماخوذ ہے ۔ دیکھو شرح للقاری ص ۱۵۴ ۔ خیر یہ معاملہ تو پھر بھی اہون ہے ۔ اس کے بعد تو مولانا مئوی نے تحریف و خیانت کا وہ افسوس ناک مظاہرہ کیا ہے کہ ’’قادیانی‘‘ بھی منہ تکتے رہ جائیں ۔ لکھتے ہیں : ’’اور مستور کی روایت کو رد کرنے پر ائمہ کا اتفاق نہیں ہے بلکہ اس میں اختلاف ہے ۔ حافظ ابن حجر نے فرمایا ہے قد قبلہ جماعۃ بغیر قید یعنی ایک جماعت نے اس کو بغیر کسی قید کے قبول کیا ہے اس کے بعد جمہور کامذہب یہ بتاتا ہے کہ مستور کی روایت نہ مقبول ہے نہ مردود ، بلکہ حال ظاہر ہونے تک اس میں توقف کیا جائے گا … (کعات ص ۸۱) ۔ حافظ کے کلام میں صریح تحریف اور خیانت مولانا نے اس موقع پرحافظ ابن