کتاب: انوار المصابیح بجواب رکعات تراویح - صفحہ 318

دنوں میں وتر میں دعأقنوت نہیں پڑھتے تھے)اگر یہ اصول صحیح ہے کہ شاگردوں کا عمل حضرت علی رضی اللہ عنہ کے عمل کے لیے زبردست دلیل اور قرینہ ہے تو اس اصول کی بنا پر دوسری ہی روایت صحیح ہوگی،کیونکہ ان کے شاگردوں کا عمل اسی پر ہے۔ پس اگر سچ مچ حضرت علی رضی اللہ عنہ کی سنت پر عمل کرنے کا داعیہ دل میں موجود ہے تو اعلان کردو کہ وتر میں دعا قنوت پورے سال نہیں بلکہ صرف رمضان کے نصف آخر میں پڑھنا چاہیے۔ قولہ : اور ابوالبختری المتوفی ــ ۸۳؁ھ جو حضرت علی رضی اللہ عنہ کے مستقر خلافت کوفہ کے باشندہ اور ان کے شاگردوں (ابو عبدالرحمٰن سلمی وحارث وغیرہما) کے شاگرد اور صحبت یافتہ ہیں، وہ بھی بیس تراویح اور تین وتر پڑھتے تھے۔ (رکعات ص۸۳) ج : اس روایت کے لیے حوالہ مولانا مئوی نے تعلیق آثار السنن کا دیا ہے،مگر’’دیا نتداری دیکھیے کہ اس روایت کو پیش کر کے مولانا مئوی نے اس پر جو جرح کی ہے اسکو مئوی صاحب نے بالکل حذف کردیا ۔ گویا جتنا حصہ اپنے مطلب کے موافق تھا اس کو لے لیا اور جتنا حصہ اپنے مطلب کے خلاف تھا اس کو چھوڑ دیا۔انصاف سے کہیے ! کیا ’’محدثانہ ‘‘شان تقدس کو یہ بات زیب دیتی ہے؟ تفو بر تو اے چرخ گرداں تفو اس روایت کے متعلق مولانا نیموی لکھتے ہیں : قلت فیه خلف لااعرف من هو انتهی (تعلیق آثارالسنن ص۵۷ج۲)یعنی اس کی سند میں ایک راوی کا نام خلف ہے۔ اس کو میں نہیں جانتا کہ کون ہے۔ مولانا مئوی کا حق تھا کہ وہ پہلے اس شبہ کا جواب دیتے اور رجال میں اپنی ’’پوری مہارت ‘‘اور ’’کامل غوروفکر ‘‘ کے زور سے بتا دیتے کہ یہاں ’’خلف ‘‘ سے

  • فونٹ سائز:

    ب ب