کتاب: انوار المصابیح بجواب رکعات تراویح - صفحہ 32

(۴) طحطاوی نے بھی شرح در مختار میں یہی لکھا ہے جس کا حوالہ پہلے گزر چکا (۵) امداد الفتاح میں ہے : قال الکمال کونها عشرین رکعة سنة الخلفاء الراشدین والذی فعله النبی صلی اللہ علیہ وسلم بالجماعة احدی عشرة بالوتر ۔ (مفاتیح لاسرار التراویح ص۹) (۶) نفحات رشیدی میں ہے : واختلفوا فی عدد رکعاتها التی یقوم بها الناس فی رمضان ما المختار منها اذ لا نص فیها فاختار بعضهم عشرین رکعة سوی الوتر واستحسن بعضهم ستا و ثلثین رکعة والوترثلث رکعات وهو الامر القدیم الذی کان علیه الصدر الاول والذی اقول به فی ذالك ان لا توقیت فیه فان کان لابد من الاقتدأ فالاقتداء برسول اﷲ صلی اللہ علیہ وسلم فی ذالك فانه ثبت عنه صلی اللہ علیہ وسلم انه ما زاد علی احدی عشرة رکعة بالوتر شیئا لا فی رمضان ولا فی غیره الا انه کان یطولها فهذا هو الذی اختاره للجمع بین قیام رمضان والاقتداء برسول اﷲ صلی اللہ علیہ وسلم قال اﷲ تعالیٰ لقد کان لکم فی رسول اﷲ اسوة حسنة انتہٰی (حوالہ مذکور و مسک الختام مترجم ص۲۸۸) یعنی تراویح کی رکعتوں کے بارے میں علماء کا اختلاف ہے کہ اس کی گنتی

  • فونٹ سائز:

    ب ب