کتاب: انوار المصابیح بجواب رکعات تراویح - صفحہ 33

تعداد مختار ہے اس لئے کہ ا س کے متعلق کوئی نص نہیں ہے ۔ بعض نے وترکے علاوہ بیس رکعات کو پسند کیا ہے اور بعض نے ۳۶ کو ۔ یہی امر قدیم ہے ۔ اسی پر صدر اوّل کے مسلمانوں کا عمل رہا ہے ۔ اس کے بارے میں میرا خیال یہ ہے کہ (یہ نفلی نماز ہے اس لئے ) اس کی کوئی خاص تعداد مقرر نہیں ہے ، لیکن اگر کسی کی اقتداء کرنا ضروری ہے تو پھر رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی اقتداء کرنی چاہئیے کیوں کہ آپ سے صحیح طور پر ثابت ہے کہ آپ نے مع وتر گیارہ رکعتوں سے زیادہ نہیں پڑھا ہے۔ البتہ آپ کی یہ نماز لمبی ہوتی تھی ۔ میں اسی کو پسند کرتا ہوں اس لئے کہ اس پر عمل کرنے سے قیام رمضان (تراویح ) ا و راتباع سنت نبوی دونوں کا حق ادا ہو جاتا ہے ۔ (اللہ تعالیٰ نے ہم کو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ہی کی پیروی اور اقتداء کا حکم دیا ہے) جیساکہ ارشاد ہے ۔ ﴿ لَقَدْ كَانَ لَكُمْ فِيْ رَسُوْلِ اللّٰهِ اُسْوَةٌ حَسَنَةٌ ﴾ (۷) علامہ عینی لکھتے ہیں :۔ فان قلت لم یبن فی الروایات المذکورة عدد الصلوة التی صلاها رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وسلم فی تلك اللیالی قلت روی ابن خزیمة وابن حبان من حدیث جابر رضی اﷲ عنه قال صلی بنا رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وسلم فی رمضان ثمان رکعات ثم اوتر انتھی (عمدۃ القاری ج ۳ صفحہ ۵۹۷) ۔ ’’یعنی اگر کوئی کہے کہ (بخاری کی) ان روایتوں میں جن میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے تراویح پڑھانے کا ذکر ہے ، رکعتوں کی تعداد بیان نہیں کی گئی ہے تو اس کے جواب میں مَیں کہوں گا کہ صحیح ابن خزیمہ اور صحیح ابن حبان کی روایتوں میں اس کا بیان آ گیا ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے (ان راتوں میں) صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کو آٹھ

  • فونٹ سائز:

    ب ب