کتاب: انوار المصابیح بجواب رکعات تراویح - صفحہ 337
ولایحاسبنی انی اغتبت احداًقال شیخنا ابو عبداللہ الحافظ (یعنی الذہبی)یشہدلہذہ المقالةکلامہ فی الجرح اولتعدیل فانہ ابلغ ما یقول فی ارجل المتروک اوالساقط فیہ نظراوسکتواعنہ اولا یکادیقول فلان کذاب ولا فلان یضع الحدیث وہذامن شدةورعہ انتہی میں امید رکھتا ہوں کہ اللہ تعالیٰ سے اس حالت میں ملاقات کروں گا کہ مجھ سے کسی شخص کی غیبت کرنے کا حساب نہ لے گا۔حافظ ذہبی نے کہا ہے کہ (ان کاکہنا سچ ہے)اس کی شہادت ان کا وہ کلام دیتا ہے جو راویوں کی جرح وتعدیل کے بارے میں انہوں نے کہا ہے کیونکہ وہ کسی متروک اور ساقط راوی کے حق میںزیادہ سے زیادہ یہی کہتے ہیں کہ اس یا اس سے لوگوں نے سکوت کیا ہے اور یہ تو گویا وہ کہتے ہی نہیں کہ فلاں شخص کذاب ہے یا حدیث وضع کرتا ہے۔یہ بخاری کی شدت ورع اور تقوٰی کا نتیجہ ہے۔ (۵)التقیید والایضاح للعراقی ص ۱۳۹ میں ہے : وفیہ بظر وسکتوا عنہ ہاتان العبارتان یقولہما البخاری فیمن ترکواحدیث انتہی. فیہ نظر اور سکتواعنہ یہ دونوں الفاظ بخاری رحمہ اللہ ایسے راویوں کے بارے میں کہتے ہیں جن کی حدیثوں کو لوگوں نے چھوڑدیا ہے۔ (۶) تدریب الراوی للسیوطی ص ۱۲۷میں ہے: البخاری یطلق فیہ نظر وسکتوا عنہ فیمن ترکو حدیثہ ویطلق منکر الحدیث علی من لا تحل فیہ نظر اور سکتوا عنہ بخاری ایسے راوی کے حق میں استعمال کرتے ہیں جس کی حدیث کو لوگوں نے چھوڑ دیا ہے اور