کتاب: انوار المصابیح بجواب رکعات تراویح - صفحہ 407

اگر بیس رکعت چھتیس اور انتالیس کے مقابلے میں احب ہے تو ظاہر ہے کہ گیارہ یا تیرہ رکعت تو بطریق اولی احب ہو گی کیونکہ اس میںقیام ان سب کے مقابلے میں لمبا ہوتا ہے ۔ امام شافعی رضی اللہ عنہ یا کسی دوسرے امام بزرگ سے منقول نہیں ہے کہ انہوں نے گیارہ رکعت کی مسنونیت کا انکار کیا ہو ۔ یہ ’’سعادت‘‘ تو بس اس زمانے کے کچھ ضدی اور متعصب حنفی علماء ہی کو حاصل ہے ۔ ائمہ کے ان اقول کے خلاف ان کے مقلدین نے اگرچہ کچھ لکھا ہو تو وہ ہمارے لئے ہرگز قابل التفات نہیں ہے کیونکہ ایسے بہت سے مسائل ہیںجن میں ائمہ کے مقلدین نے ادعائے تقلید کے باوجود اپنے ائمہ کے مسلک کے خلاف راہ اختیار کی ہے اور اس کے لئے کوئی حیلہ تلاش کر لیا ہے ۔ نقل عبارت میں مولانا مئوی کی خیانت : شیخ الاسلام ابن تیمیہ رحمہ اللہ کی جو عبارت ابھی اوپر نقل ہوئی ہے یہ پوری عبارت ہم نے حضرت نواب صاحب مرحوم کی کتاب ’’االانتقاد الرجیح‘‘ سے لی ہے ۔ ’’الانتقاد الرجیح‘‘ کا جو نسخہ اس وقت ہمارے سامنے ہے یہ وہ نسخہ ہے جو مصر میں ’’جلا العینین فی محاکمۃ الاحمدین‘‘ للآلوسی کے حاشیہ پر طبع ہوا ہے ۔ اس کے ص ۳۲۹ و ص ۳۳۰ پر یہ عبارت موجود ہے اس عبارت کے حوالے مولانا مئوی نے بھی اپنی کتاب کے متعدد مقامات پر دیئے ہیں مگر افسوس یہ ہے کہ پوری عبارت نقل کرنے کے بجائے اس کے مختلف فقروںکو (ان کے سیاق و سباق سے الگ کر کے ) لے لیا ہے اور پھر اپنے مطلب کے موافق انکو جہاں چاہا ہے فٹ کر کے دکھایا ہے ۔ سب سے ہے اس کا سر کاٹ کر الگ کر دیا ہے یعنی اس کے شروع کایہ حصہ بل هو کان صلی اللہ علیہ وسلم لا یزید فی رمضان ولا غیره علی ثلث عشرة رکعة بلکہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم رمضان کا مہینہ ہو یا غیر رمضان کا کبھی تیرہ رکعت سے زیادہ نہیں پڑھتے تھے ) اس کو تو اس طرح

  • فونٹ سائز:

    ب ب