کتاب: دوستی اور دشمنی کا اسلامی معیار - صفحہ 54
ترجمہ:جناب ابو ھریرۃ رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:اللہ تعالیٰ فرماتا ہے: جس نے میرے کسی دوست سے عداوت قائم کی ،میرا اس کے خلاف اعلان جنگ ہے۔ اس جنگ کا سب سے زیادہ خطرہ مول لینے والاوہ شخص ہے جو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے صحابہ رضوا ن اللہ علیھم اجمعین سے بغض وعداوت رکھے ،ان کی شان میں گستاخانہ رویہ اپنائے اور ان کی تنقیصِ شان کی سعی لاحاصل میں مصروف رہے ۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: (میرے صحابہ کے بارے میں اللہ تعالیٰ سے ڈرتے رہو،انہیں اپنی تنقید کا نشانہ نہ بناؤ، جس نے انہیں کوئی تکلیف پہنچائی ،اس نے مجھے دکھ دیا اور جس نے مجھے دکھی کیا اس نے اللہ تعالیٰ کو تکلیف پہنچائی ، اور جس نے اللہ تعالیٰ کو تکلیف پہنچائی اللہ تعالیٰ اسے عنقریب صفحۂ ہستی سے مٹا ڈالے گا) افسوس کہ بعض گمراہ فرقوں کا مذہب اور عقیدہ ہی صحابہ کرام رضوان اللہ علیھم اجمعین کی عداوت پر قائم ہے ۔ ہم اللہ تعالیٰ کی اس کے غضب اور دردناک عذاب سے پناہ چاہتے ہیں اور عفو وعافیت کے سائل وخواستگار ہیں۔ وصلی اللّٰہ علیہ وسلم وبارک علی نبینا محمد وا لہ وصحبہ وسلم