کتاب: درود -1 - صفحہ 81

٭ تکلیف ‘ مصیبت ‘ رنج اور غم کے موقع پر درود پڑھنا مسنون ہے ۔ حضرت ابی بن کعب رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے عرض کیا ’’اے اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم ! میں آپ پر کثرت سے درود بھیجتاہو ں اپنی دعا میں سے کتنا وقت درود کے لئے وقف کروں ؟ ‘‘ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا ’’جتنا تو چاہے۔ ‘‘ میں نے عرض کیا ’’ایک چوتھا ئی صحیح ہے؟‘‘ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا ’’جتنا تو چاہے ‘ لیکن اگر اس سے زیادہ کرے تو تیرے لئے اچھا ہے ۔‘‘ میں نے عرض کیا ’’ نصف وقت مقرر کردوں؟ ‘‘ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا ’’جتنا تو چاہے لیکن اگر اس سے زیادہ کرے تو تیرے لئے اچھا

  • فونٹ سائز:

    ب ب