کتاب: فتنہ وضع حدیث اور موضوع احادیث کی پہچان - صفحہ 46
’’بروایت سیدنا سلمہ بن اکوع رضی اللہ عنہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ جس نے میری طرف وہ بات منسوب کی جو میں نے نہیں کہی تو وہ اپنا ٹھکانہ جہنم کو بنا لے‘‘۔ عن ابی قتادة قال سمعت رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم یقول علی ہذا المنبر ایاکم وکثرة الحدیث عنی فمن قال علی فلیقل حقا او صدقا ومن تقول علی ما لم اقل فلیتبوأ مقعدہ من النار  ’’سیدنا ابو قتادۃ رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ میں نے اس منبر پر رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو یہ کہتے ہوئے سنا کہ تم لوگ بہت زیادہ حدیثیں بیان کرنے سے بچو، جس نے میری نسبت سے کوئی بات کہی وہ صرف حق کہے یا سچ کہے اور جس نے میری طرف وہ بات منسوب کی جو میں نے نہیں کہی تو وہ اپنا ٹھکانہ جہنم کو بنا لے‘‘۔ عن جابر قال علیہ الصلوة والسلام من کذب علی متعمدا فلیتبوأ مقعدہ من النار  ’’بروایت سیدنا جابر رضی اللہ عنہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ جس نے میری طرف جھوٹی بات منسوب کی تو وہ اپنا ٹھکانہ جہنم کو بنا لے‘‘۔ حدیثِ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کامعاملہ اتنا اہم اور نازک ہے کہ صرف جھوٹی بات منسوب کرنا ہی موجبِ جہنم نہیں ہے بلکہ ایسی روایت کا بیان کرنا بھی باعثِ عذاب ہے کیونکہ جھوٹی بات بیان کرنے والا گھڑنے والے کے عمل میں شامل ہے۔ چنانچہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے صراحت فرمائی: من حدث علی حدیثا وہو یری انہ کذب فہو احد لکاذبین  ’’جس نے کوئی حدیث بیان کی، حالانکہ وہ جانتا ہے کہ یہ جھوٹ ہے تو وہ بھی جھوٹ گھڑنے والوں میں سے ایک ہے‘‘۔ وضع حدیث کی جسارت : ان وعیدوں اور تنبیہوں کااثر یہ ہوا کہ صحابہ کرام رضی اللہ عنہم حدیث کے سلسلہ میں انتہائی حساس