کتاب: انسان کی عظمت کی حقیقت - صفحہ 106
تمہارے پروردگار کی قسم ہم ان کو جمع کریں گے اور شیطانوں کو بھی پھر ان سب کو جہنم کے گرد حاضر کریں گے اور وہ گھٹنوں کے بل گر رہے ہوں گے۔ ]وَاُحْضِرَتِ الْاَنْفُسُ الشُّحَّ ] اور بخل ہر نفس میں موجود ہے۔ ]وَاِنْ کُلٌّ لَّمَّا جَمِیْعٌ لَّدَیْنَا مُحْضَرُوْنَۧ ] اور سب کے سب ہمارے روبرو حاضر کئے جائیں گے۔ ]وَہُمْ لَہُمْ جُنْدٌ مُّحْضَرُوْنَ ] اور وہ ان کی فوج ہوکر حاضر کئے جائیں گے۔ تو ان قرآنی نصوص کے مطابق حاضر کا معنی ہوا(یہاں ہمارے پاس موجود) ایسا عقیدہ اہل سنت کا نہیں ہے بلکہ صوفیوں کا ہے جیسا کہ کتاب کے شروع میں سید عبدالقادر جیلانی رحمہ اللہ سے نقل کیا گیا تھا۔ سید اتباع التابعین امام عبداللہ بن المبارک رحمہ اللہ سے پوچھا گیا : کیف نعرف ربنا؟قال بانہ فوق السماء السابعة علی العرش بائن من خلقہ ہم اپنے رب کو کیسے پہچانیں؟فرمایا (اس طرح پہچانو کہ )وہ ساتوں آسمانوں کے اورپر عرش پر ہے اور مخلوق سے الگ ہے۔ امام عثمان بن عبداللہ الدارمی رحمہ اللہ نے مذکور قول کتاب الرد علی الجہیمہ ص 23پر اس سند سے ذکر کیا : قال حدثنا الحسن بن الصالح البزار ثنا علی بن الحسن بن شفیق عن المبارک الخ