کتاب: انسان کی عظمت کی حقیقت - صفحہ 32

ث: اور اگر انکے آگے پردہ آجائے تو پھر ہماراوجو دختم ہوجائے (ص37) اللہ تعالیٰ کی طرف سے آنیوالی روشنی کوکوئی روک سکتا ہے ؟’’من یھدی اللہ فلا مضل لہ ‘‘ کے کیا معنی ہوں گے؟ خ: اللہ تعالیٰ کو موجودات کا ٹھکانہ بتایا گیا ہے۔ اس کا معنی مستقر کر ویامنتہی لیکن قرآن اس عقیدے کے خلاف کہتاہے۔ اِلٰى رَبِّكَ يَوْمَىِٕذِۨ الْمُسْتَــقَرُّ 12۝ۭ وَاَنَّ اِلٰى رَبِّكَ الْمُنْتَهٰى 42؀ۙ وَاَنَّ اِلٰى رَبِّكَ الْمُنْتَهٰى 42؀ۙ یعنی اللہ تعالیٰ کے پاس مستقر یا منتہی ہے نہ کہ اللہ خود ہمارا مستقر یا منتہی ہے۔(معاذ اللہ )۔ یعنی اللہ تعالیٰ کے پاس مستقر یا منتہی ہے نہ کہ اللہ خود ہمارا مستقر یا منتہی ہے۔(معاذ اللہ )۔ یعنی اللہ تعالیٰ کے پاس مستقر یا منتہی ہے نہ کہ اللہ خود ہمارا مستقر یا منتہی ہے۔(معاذ اللہ )۔ بہ بین فرق از کجا است تا بکجا ذ: کہتا ہے کہ اگر خالق موجودات پر تیری نظر نہ پڑی تو پھر تیری نظر کسی پر نہ پڑی اور تو نہ کچھ نہیں دیکھا۔(ص42) پروردگار نے کہا کہ تم مجھے ہر گز نہیں دیکھ سکتے۔اور خود فرمایا :’’لن ترانی ‘‘ پروردگار نے کہا کہ تم مجھے ہر گز نہیں دیکھ سکتے۔اور خود فرمایا :’’لن ترانی ‘‘ پروردگار نے کہا کہ تم مجھے ہر گز نہیں دیکھ سکتے۔اور خود فرمایا :’’ وَلٰكِنِ انْظُرْ اِلَى الْجَبَلِ  ‘‘’’ہاں پہاڑ کی طرف دیکھتے رہو‘‘۔ ایک ہی شخص یعنی موسی علیہ السلام پہاڑ کو جو بقول صوفیہ اللہ تعالیٰ ہی کا مظہر ہے دیکھ رہا ہے مگر اللہ تعالیٰ کو نہیں دیکھ سکتا۔ ض: انه کان ظلوما جهولا کے متعلق جو کچھ لکھا ہے اس کے بارے میں بتائے کہ ظلوم اور

  • فونٹ سائز:

    ب ب