کتاب: انسان کی عظمت کی حقیقت - صفحہ 44

کیا اس رزق کو بھی زمینی پیداوار کہیں گے؟ قال۔ جب کوئی چیز ترقی کر تی ہے تو اپنے ارد گرد کے ماحول کی کچھ چیزوں کو اپنے وجود میں شامل کر لیتی ہے جبھی ترقی ہوتی ہے۔ (ص26) اَللّٰهُ الَّذِيْ خَلَقَكُمْ مِّنْ ﮨـعْفٍ ثُمَّ جَعَلَ مِنْۢ بَعْدِ ﮨـعْفٍ قُوَّةً ثُمَّ جَعَلَ مِنْۢ بَعْدِ قُوَّةٍ ﮨـعْفًا وَّشَيْبَةً  اَللّٰهُ الَّذِيْ خَلَقَكُمْ مِّنْ ﮨـعْفٍ ثُمَّ جَعَلَ مِنْۢ بَعْدِ ﮨـعْفٍ قُوَّةً ثُمَّ جَعَلَ مِنْۢ بَعْدِ قُوَّةٍ ﮨـعْفًا وَّشَيْبَةً  وہ اللہ ہی تو ہے جس نے تمہیں (ابتداء میں) کمزور حالت میں پیدا کیا پھر کمزوری کے بعد طاقت عنایت کی پھر طاقت کے بعد کمزوری اور بڑھاپا دیا۔ جب ماحول میں تمام اشیاء موجود ہیں تو پھر ترقی کی راہ مسدود کیوں ہوئی؟ کمزوری کیوں آئی؟ پیرانہ سالی کا شکار کیوں ہوا؟ اور اگر یہاں روحانی ترقی مراد ہے تو تمہارے بقول ہمارے وجود کو اس ذات بابرکت کے نوری وجود سے ایسے ذرات ملتے رہتے ہیں کہ جن سے ہمارا وجود ہمیشہ جوان رہتا ہے (صفحہ37) اس عبارت میں جو گوہر افشانیاں کی گئی ہیں ان کا ذکر اپنے اپنے موقع پر آئے گا (ان شاء اللہ)۔ مگر اتنا تو بتاؤ کہ کیا ان ذرات کو انسان کی کشش کھینچ کر لاتی ہے؟ معلوم نہیں اور اسی طرح ہم نے تمہارے طرف روح القدس کے ذریعے سے قرآن بھیجاتم نہ تو کتاب کو جانتے تھے اور نہ ایمان کو۔ وَكَذٰلِكَ اَوْحَيْنَآ اِلَيْكَ رُوْحًا مِّنْ اَمْرِنَا ۭ مَا كُنْتَ تَدْرِيْ مَا الْكِتٰبُ وَلَا الْاِيْمَانُ اور اسی طرح ہم نے تمہارے طرف روح القدس کے ذریعے سے قرآن بھیجاتم نہ تو کتاب کو جانتے تھے اور نہ ایمان کو۔ وَكَذٰلِكَ اَوْحَيْنَآ اِلَيْكَ رُوْحًا مِّنْ اَمْرِنَا ۭ مَا كُنْتَ تَدْرِيْ مَا الْكِتٰبُ وَلَا الْاِيْمَانُ

  • فونٹ سائز:

    ب ب