کتاب: انسان کی عظمت کی حقیقت - صفحہ 45
کہ محویت کے کس عالم میں یہ الفاظ کہہ دیتے ہیں۔ اللہ تعالیٰ فرماتا ہے: [وَکَذٰلِکَ اَوْحَیْنَآ اِلَیْکَ رُوْحًا مِّنْ اَمْرِنَا ۭ مَا کُنْتَ تَدْرِیْ مَا الْکِتٰبُ وَلَا الْاِیْمَانُ] اور اسی طرح ہم نے تمہارے طرف روح القدس کے ذریعے سے قرآن بھیجاتم نہ تو کتاب کو جانتے تھے اور نہ ایمان کو۔ [وَمَا کُنْتَ تَرْجُوْٓا اَنْ یُّلْقٰٓی اِلَیْکَ الْکِتٰبُ اِلَّا رَحْمَةً مِّنْ رَّبِّکَ ] او رتمہیں امید نہ تھی کہ تم پر یہ کتاب نازل کی جائے گی مگر تمہارے رب کی مہربانی سے (نازل ہوئی)۔ قال۔ مرجان ایک پتھر ہے جو سمندر کی گہرائیوں میں پیدا ہوتا ہے اور سال میں منوں کے حساب سے بڑھتا رہتا ہے۔ (صفحہ29) اقول۔ مرجان خالص پتھر نہیں ہے، سندھی ادبی بک بورڈ کی طرف سے شائع کردہ فرہنگ جعفری ص 356۔ ج 1۔ دیکھئے۔ وہاں مرجان کے بارے میں لکھا ہوا ہے کہ یہ سمندر میں ایک درخت کی پیداوار ہے نیز علامہ حکیم طنطاوی تفسیر الجواہر صفحہ 101 ج 8 میں لکھتے ہیں: واما المرجان فانہ صنع حیوانات الصغیرة تصنعہ من مواد کلیة فتجعلہا مساکن لہا و تبنی تلک المساکن متلاصقة متلاہمة فتکون منہا تلک الصخور علی اختلاف صورہا واشکالہا. مرجان چھوٹے چھوٹے جانوروں کی بنائی ہوئی چیز کا نام ہے جنہیں یہ رنگ کے مواد سے بناتے ہیں پھر اسی کو اپنا جائے مسکن بناتے ہیں۔ یہ گھر تو ایک دوسرے سے جڑے ہوتے ہیں مگر ان کے رنگ مختلف ہوتے ہیں۔ پھر اس سے مختلف شکلوں اور