کتاب: انسان کی عظمت کی حقیقت - صفحہ 55
قال : ایک اور روایت میں ہے کہ حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم تھوڑی دیر کے لئے غائب ہوگئے تھے اس بارے میں آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا اسوقت اللہ تعالی نے مجھے ساری کائنات کی سیر کروائی اور ساری کائنات کو میرے وجود کی زیارت کرائی(صفحہ 32) نیز صفحہ 33پر لکھا ے کہ بی بی آمنہ فرماتی ہیں کہ جس وقت آپ پیدا ہوئے تو حالت سجدہ میں تھے اور انگلی اوپر اٹھائی ہوئی تھی کہ سجدہ صرف اللہ کے لئے ہے ، کسی اور کے لئے ہرگز نہیں ۔ اقول: یہ ایک ہی روایت ہے جو علامہ سیوطی نے الخصائص الکبری صفحہ 120ج1طبع مصر میں بحوالہ ابو نعیم ذکر کی ہے اور ابونعیم نے دلائل النبوۃ صفحہ 221پر مندرجہ ذیل سند سے ذکر کی ہے : قال حدثنا سلیمان بن احمد ثناعمرو بن محمد بن الصباح قال اثنا یحی بن عبداللہ البابلتی ثنا ابوبکر بن ابی مریم عن سعید بن عمر الانصاری عن ابیہ قال ابن عباس فذکر الحدیث. قال: عبدالمطلب کا ایک غلام تھا جو عمر رسیدہ تھا اس نے عبدالمطلب سے پوچھا کہ کہاں جا رہے ہو؟فرمایا بزرگوں سے حصول برکت کے لئے کعبۃ اللہ شریف جارہاہوں اور اس بچے کو ان کے قدموں میں ڈالوں گا(صفحہ 33-34) اقول: یہ واقعہ کہیں بھی سند سے مروی نہیں ہے صرف سیرۃ ابن ہشام میں اس کا تذکرہ ملتا ہے اور وہ بھی بغیر سند کے چنانچہ ملاحظہ ہو۔ قال ابن اسحاق فلما وضعتہ امہ صلی اللہ علیہ وسلم ارسلت الی جدہ عبدالمطلب انہ قد ولد لک غلام فاتہ فانظر الیہ فاتاہ فنظر الیہ و حدثتہ بما رات. ابن اسحق بیان کرتے ہیں وضع حمل کے بعد بی بی آمنہ نے آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے دادا