کتاب: انسان کی عظمت کی حقیقت - صفحہ 66

اس درخت کے پیغمبر تھے؟ (معاذ اللہ)۔ تمام عالم کے اعیان ثابت تھے، باعتبار باطن قدیم ہیں اور باعتبار ظاہر حادث۔ (ناواقف) کہتے ہیں کہ مذہب صوفیہ مثل دہریوں کے ہے، یہ غلط محض ہے۔ صوفیہ باعتبار باطن (معنی) قدیم کہتے ہیں، بخلاف دہریہ کے کہ باعتبار اس صورت (موجودہ عالم) ظاہری کے قدیم کہتے ہیں۔ فرمایا کہ اتمام عالم کے اعیان ثابت تھے، باعتبار باطن قدیم ہیں اور باعتبار ظاہر حادث۔ (ناواقف) کہتے ہیں کہ مذہب صوفیہ مثل دہریوں کے ہے، یہ غلط محض ہے۔ صوفیہ باعتبار باطن (معنی) قدیم کہتے ہیں، بخلاف دہریہ کے کہ باعتبار اس صورت (موجودہ عالم) ظاہری کے قدیم کہتے ہیں۔ فرمایا کہ اتمام عالم کے اعیان ثابت تھے، باعتبار باطن قدیم ہیں اور باعتبار ظاہر حادث۔ (ناواقف) کہتے ہیں کہ مذہب صوفیہ مثل دہریوں کے ہے، یہ غلط محض ہے۔ صوفیہ باعتبار باطن (معنی) قدیم کہتے ہیں، بخلاف دہریہ کے کہ باعتبار اس صورت (موجودہ عالم) ظاہری کے قدیم کہتے ہیں۔ فرمایا کہ اِنِّی اَنَا رَبُّكَ فَاخْلَعْ نَعْلَیْكَ جو طور پر آواز آئی تھی، وہ حضرت موسیٰ علیہ السلام کے باطن سے آئی تھی، سب انسانوں میں موجود ہے۔ بقول ؎ جسے نواسہ سمجھا وہ نانا نکلا تم نے تو موسیٰ علیہ السلام کے بجائے اس کلام کو درخت کا بولنا کہا ہے۔ علاوہ ازیں تم تمام موجودات کے قدیم ہونے کے قائل ہو اپنے دل میں خطرئہ دہریت محسوس کرتے ہو مگر پھر بھی علم باطنی اور علم ظاہری میں تاویل کر کے فرق کرتے ہو اور باطن کا سہارا لیتے ہو۔ جبکہ الباطن تو اللہ تعالیٰ کے اسما الحسنیٰ میں سے ہے تو پھر یہ بات تعجب انگیز نہیں کہ تم موجودات کو اللہ تعالیٰ کی صفت باطن میں شریک کرتے ہو۔ قال۔ علیم کی تجلی نے دماغوں میں علم دیا، کلیم کی تجلی نے زبان میں اثر دیا، مرید کی تجلی نے دل میں ارادہ ڈالا، قدیر کی تجلی نے بدن میں قوت ڈالی، حی کی تجلی نے ہمیں زندہ بنیا، وہی سمیع وہی بصیر وہی علیم وہی حی وہ مرید اور وہی قدیر ہے۔ اسی کے اثرات ہم پر وارد ہوئے (صفحہ38) اقول۔ یہ وہی وجودیوں والا عقیدہ ہے، علم کے معنی جاننا ہے، تو جو لوگ ان پڑھ اور جاہل ہیں کیا اسے بھی علیم کی تجلی کہیں گے؟ نعوذ باﷲ من ذلك۔ اس کے علاوہ کلماتِ کفریہ و شرکیہ اور گالیاں وغیرہ بھی تجلیات الٰہیہ کا اثر کہلائیں گی؟ اللہ کو کلیم کہہ کر دوسروں کا محتاج بنایا ہے اور ارادے اچھے بھی ہوتے ہیں اور برے بھی، کیا یہ بھی تجلی ہی کی برکاتا ہیں؟ انسان میں خواہشیں بھی ہوتی ہیں مثلاً بھوک پیاس وغیرہ۔

  • فونٹ سائز:

    ب ب