کتاب: اسلام اور مستشرقین - صفحہ 161
’’پس آپ کے رب کی قسم! وہ لوگ اس وقت تک مومن نہیں کہلائے گے جب تک کہ وہ اپنے باہمی اختلافات میں آپ سے فیصلہ نہ کروائیں۔ اور پھر جو فیصلہ آپ نے کیا، اس بارے اپنے دل میں بھی کوئی تنگی نہ محسوس کریں اور اسے دل سے تسلیم کر لیں۔‘‘20 پس اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم کی دین اسلام میں اس قدر واضح آئینی اور قانونی حیثیت کے انکارکو ایک متعصبانہ رویہ (prejudiced approach) تو قرار دیا جا سکتا ہے لیکن کوئی علمی سوچ (academic attitude) نہیں۔ اسی طرح شاخت اپنی تحقیق میں اس اہم نکتے کو جانتے بوجھتے نظر انداز کر رہا ہے کہ احادیث کے علاوہ قرآن مجید میں بھی تو ہر شعبہ زندگی کے بارے کچھ نہ کچھ قوانین بیان ہوئے ہیں۔ اگر بالفرض، شاخت کی بات مان لی جائے کہ فقہی احادیث کا ذخیرہ علماء نے وضع کیا ہے تو قرآن مجید میں اسلامی قانون سے متعلق جو آیات یا ہدایات موجود ہیں، ان کا واضع (Author)کون ہے؟ کیا ان آیات کو بھی مسلمان فقہاء نے گھڑ لیا تھا؟ اس سے شاخت کا یہ نقطہ نظر بالکل غلط ثابت ہو جاتا ہے کہ پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنی زندگی میں اپنی امت کو کسی بھی قسم کاکوئی قانو ن نہیں دیا تھا۔ اسی طرح اپنے اس نکتہ نظر کو ثابت کرنے کے لیے کہ اسلام کی پہلی صدی میں اسلامی قانون نام کی کوئی چیزسرے سے موجودہی نہیں تھی، شاخت نے یہ تک لکھ دیا کہ