کتاب: طہارت کے مسائل - صفحہ 80

اللّٰہِ صلی اللہ علیہ وسلم فَسَأَلُہٗ عَنِ الْوُضُوْئِ فَاَرَاہُ ثَلاَ ثًا ثَلاَ ثًا وَ قَالَ ہٰذَا الْوُضُوْئُ ، فَمَنْ زَادَ عَلٰی ہٰذَا فَقَدْ أَسَائَ وَ تَعَدَّی وَ ظَلَمَ ۔ رَوَاہُ اَحْمَدُ وَالنَّسَائِیُّ وَابْنُ مَاجَہْ (حسن) حضرت عمرواپنے باپ شعیب سے اور شعیب اپنے داداعبداللہ بن عمروبن عاص رضی اللہ عنہم سے روایت کرتے ہیں کہ ایک دیہاتی نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے وضو کا طریقہ دریافت کیا تو نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے اسے تین تین بار وضو کے اعضاء دھوکر دکھائے اور فرمایا’’وضو کا طریقہ یہ ہے ۔ جس نے اس سے زیادہ مرتبہ دھوئے اس نے برا کیا ،زیادتی کی اور ظلم کیا۔ ‘‘اسے احمد، نسائی اور ابن ماجہ نے روایت کیاہے۔ (مسئلہ نمبر147)ایک وضو سے کئی نمازیں پڑھی جاسکتی ہیں۔ عَنْ بُرَیْدَۃَ رضی اللہ عنہ اَنَّ النَّبِیَّ صلی اللہ علیہ وسلم صَلَّی الصَّلَوَاتِ یَوْمَ الْفَتْحِ بِوُضُوْئٍ وَاحِدٍ۔ رَوَاہُ مُسْلِمٌ حضرت بریدہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ فتح مکہ کے دن رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے کئی نمازیں ایک وضو سےپڑھیں۔ اسے مسلم نے روایت کیاہے۔ (مسئلہ نمبر148)وضو کرنے کے بعد بے مقصد باتیں یا فضول کام نہیں کرنے چاہئیں۔ عَنْ کَعْبِ بْنِ عُجْرَۃَ رضی اللہ عنہ قَالَ :قَالَ رَسُوْلُ اللّٰہِ صلی اللہ علیہ وسلم (( اِذَا تَوَضَّاَ اَحَدُکُمْ فَاَحْسَنَ وُضُوْئَ ہُ ثُمَّ خَرَجَ عَامِدًا اِلَی الْمَسْجِدِ فَلاَ یُشَبِّکَنَّ یَدَیْہِ فَاِنَّہُ فِیْ صَلاَۃٍ ۔رَوَاہُ اَحْمَدُ وَالتِّرْمِذِیُّ وَاَبُوْدَاؤُدَ وَالنَّسَائِیُّ وَالدَّارْمِیُّ (صحیح) حضرت کعب بن عجرہ رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا’’جب تم میں سے کوئی وضو کرکے مسجد کی طرف جائے تو راستے میں انگلیوں میں انگلیاں دے کر نہ چلے۔کیونکہ وضو کے بعد آدمی حالت نماز میں ہوتاہے۔‘‘اسے احمد ،ترمذی،ابوداؤد،نسائی اور دارمی نے روایت کیاہے۔ (مسئلہ نمبر149)ٹیک لگائے بغیر نیند یا اونگھ آجائے تووضویاتیمم نہیں ٹوٹتا۔ عَنْ اَنسِ بْنِ مَالِکٍ رضی اللہ عنہ قَالَ : کَانَ أَصْحَابُ رَسُوْلِ اللّٰہِ صلی اللہ علیہ وسلم یَنْتَظِرُوْنَ الْعِشَائَ

  • فونٹ سائز:

    ب ب