کتاب: زکوۃ کے مسائل - صفحہ 33
أَہْمِیَّـــــــــــۃُ الزَّکَاۃِ زکاۃ کی اہمیت مسئلہ نمبر:11 جس سونے اور چاندی کی زکاۃادا نہ کی جائے،قیامت کے دن اس سونے اور چاندی کی تختیاں بنا کر آگ میں گرم کی جائیں گی اور ان سے اس کے مالک کی پیشانی پیٹھ اور پہلو داغے جائیں گے۔ مسئلہ نمبر:12 جن جانوروں کی زکاۃادا نہ کی جائے قیامت کے دن وہ جانور اپنے مالک کو پچاس ہزار سال تک اپنے پاؤں تلے روندتے رہیں گے۔ عَنْ اَبِیْ ہُرَیْرَۃَ رضی اللہ عنہ قَالَ قَالَ رَسُوْلُ اللّٰہِ صلی اللہ علیہ وسلم’’ مَا مِنْ صَاحِبِ ذَہَبٍ وَلاَ فِضَّۃٍ لاَّ یُؤَدِّیْ مِنْہَا حَقَّہَا اِلاَّ اِذَا کَانَ یَوْمُ الْقِیَامَۃِ صُفِّحَتْ لَہٗ صَفَائِحَ مِنْ نَارٍ فَاُحْمِیَ عَلَیْہَا فِیْ نَارِ جَہَنَّمَ فَیُکْوٰی بِہَا جَنْبُہُ وَجَبِیْنُہُ وَظَہْرُہُ کُلَّمَا رُدَّتْ اُعِیْدَتْ لَہٗ فِیْ یَوْمٍ کَانَ مِقْدَارُہٗ خَمْسِیْنَ اَلْفَ سَنَۃٍ حَتّٰی یُقْضٰی بَیْنَ الْعِبَادِ فَیَرَی سَبِیْلَہٗ اِمَّا اِلَی الْجَنَّۃِ وَاِمَّا اِلَی النَّارِ‘‘ قِیْلَ یَا رَسُوْلَ اللّٰہِ صلی اللہ علیہ وسلم فَالْاِبِلُ ؟ قَالَ (وَلاَ صَاحِبُ اِبِلٍ لاَّ یُؤَدِّیْ مِنْہَا حَقَّہَا وَمِنْ حَقِّہَا حَلَبُہَا یَوْمَ وِرْدِہَا اِلاَّ اِذَا کَانَ یَوْمُ الْقِیَامَۃِ بُطِحَ لَہَا بِقَاعٍ قَرْقَرٍ اَوْفَرَ مَا کَانَتْ لاَ یَفْقِدُ مِنْہَا فَصِیْلاً وَاحِدًا تَطَؤُہُ بِاَخْفَافِہَا وَتَعَضُّہٗ بِاَفْوَاہِہَا کُلَّمَا مَرَّ عَلَیْہِ اُوْلاَہَا رُدَّ عَلَیْہِ اُخْرَاہَا فِیْ یَوْمٍ کَانَ مِقْدَارُہٗ خَمْسِیْنَ اَلْفَ سَنَۃٍ حَتّٰی یُقْضٰی بَیْنَ الْعِبَادِ فَیَرَی سَبِیْلَہٗ اِمَّا اِلَی الْجَنَّۃِ وَاِمَّا اِلَی النَّارِ) قِیْلَ یَا رَسُوْلَ اللّٰہِ صلی اللہ علیہ وسلم فَالْبَقَرُ وَالْغَنَمُ ؟ قَالَ ’’ وَلاَ صَاحِبُ بَقَرٍ وَلاَ غَنَمٍ لاَّ یُؤَدِّیْ مِنْہَا حَقَّہَا اِلاَّ اِذَا کَانَ یَوْمُ الْقِیَامَۃِ بُطِحَ لَہَا بِقَاعٍ قَرْقَرٍ لاَّ یَفْقِدُ مِنْہَا شَیْئًا لَیْسَ فِیْہَا عَقْصَائُ وَلاَ جَلْحَائُ وَلاَ عَضْبَائُ بِقُرُوْنِہَا وَتَطَؤُہُ بِاَظْلاَفِہَا کُلَّمَا مَرَّ عَلَیْہِ اُوْلاَہَا رُدَّ عَلَیْہِ اُخْرَاہَا فِیْ یَوْمٍ کَانَ مِقْدَارُہٗ خَمْسِیْنَ اَلْفَ سَنَۃٍ حَتّٰی یُقْضٰی بَیْنَ الْعِبَادِ فَیَرَی سَبِیْلُہٗ اِمَّا اِلَی الْجَنَّۃِ وَاِمَّا اِلَی النَّارِ‘‘ ۔(رَوَاہُ مُسْلِمٌ)