کتاب: زکوۃ کے مسائل - صفحہ 40
أَلـزَّکـَاۃُ فِیْ ضَوْئِ الْقُرْاٰنِ زکاۃ ،قرآن مجید کی روشنی میں مسئلہ نمبر:18 پہلی امتوں پر بھی زکاۃفرض تھی۔ {وَاِذْ اَخَذْنَا مِیْثَاقَ بَنِیْٓ اِسْرَاۗءِیْلَ لَا تَعْبُدُوْنَ اِلَّا اللّٰہَ ۣوَبِالْوَالِدَیْنِ اِحْسَانًا وَّذِی الْقُرْبٰی وَالْیَتٰمٰی وَالْمَسٰکِیْنِ وَقُوْلُوْا لِلنَّاسِ حُسْـنًا وَّاَقِیْمُوا الصَّلٰوةَ وَاٰتُوا الزَّکٰوةَ ۭثُمَّ تَوَلَّیْتُمْ اِلَّا قَلِیْلًا مِّنْکُمْ وَاَنْتُمْ مُّعْرِضُوْنَ }(سورۃ بقرہ: 83) ’’یاد کرو جب بنی اسرائیل سے ہم نے پختہ عہد لیا تھا کہ اللہ کے سوا کسی کی عبادت نہ کرنا،ماں باپ کے ساتھ رشتہ داروں کے ساتھ یتیموں اور مسکینوں کے ساتھ نیک سلوک کرنا،لوگوں سے بھلی بات کہنا،نماز قائم کرنااور زکاۃدینا،مگر تھوڑے آدمیوں کے سوا تم سب اس عہد سے پھر گئے ۔‘‘ [وَکَانَ یَاْمُرُ اَہْلَہٗ بِالصَّلٰوةِ وَالزَّکٰوةِ وَکَانَ عِنْدَ رَبِّہٖ مَرْضِیًّا }(سورہ مریم : 55) ’’اسماعیل اپنے گھر والوں کو نماز اور زکاۃکی تاکید کیا کرتے تھے،اور وہ اپنے رب کے نزدیک بڑے پسندیدہ انسان تھے۔‘‘ { ‎وَاَوْصٰینِیْ بِالصَّلٰوةِ وَالزَّکٰوةِ مَا دُمْتُ حَیًّا }(سورہ مریم :31) ’’اللہ تعالیٰ نے مجھے (یعنی عیسی علیہ السلام کو)حکم دیاکہ جب تک زندہ ہوں نماز قائم کروں اور زکاۃادا کرتا رہوں۔‘‘ مسئلہ نمبر:19 ادائیگی زکاۃایمان کی نشانی اور حرمت جان کی ضمانت ہے۔ {فَاِنْ تَابُوْا وَاَقَامُوا الصَّلٰوةَ وَاٰتَوُا الزَّکٰوةَ فَاِخْوَانُکُمْ فِی الدِّیْنِ ۭوَنُفَصِّلُ الْاٰیٰتِ لِقَوْمٍ یَّعْلَمُوْنَ }(سورۃتوبہ: 11) ’’پس اگر یہ(کافر)توبہ کر لیں اور نماز قائم کریں،زکاۃدیں تو یہ تمہارے دینی بھائی ہیں (لہٰذا ان