کتاب: زکوۃ کے مسائل - صفحہ 43
’’جو لوگ ایمان لے آئیں اور نیک عمل کریں،نماز قائم کریں اور زکاۃدیں ان کا اجر(بے شک) ان کے رب کے پاس ہے،اور ان کے لئے کسی خوف اور رنج کا موقع نہیں ۔‘‘ مسئلہ نمبر:28 زکاۃادا نہ کرنا کفر و شرک کی علامت ہے۔ مسئلہ نمبر:29 زکاۃادا نہ کرنا ہلاکت اور بربادی کا باعث ہے۔ { وَوَیْلٌ لِّـلْمُشْرِکِیْنَ Č۝ۙالَّذِیْنَ لَا یُؤْتُوْنَ الزَّکٰوةَ وَہُمْ بِالْاٰخِرَةِ ہُمْ کٰفِرُوْنَ }(سورۃحم سجدہ: 6تا7) ’’تباہی ہے ان مشرکوں کے لئے جو زکاۃنہیں دیتے اور آخرت کے منکر ہیں۔‘‘ مسئلہ نمبر:30 جس مال سے زکاۃادا نہ کی جائے وہ مال قیامت کے دن اپنے مالک کے گلے میں طوق بنا کر ڈالا جائے گا۔ { وَلَا یَحْسَبَنَّ الَّذِیْنَ یَبْخَلُوْنَ بِمَآ اٰتٰیھُمُ اللّٰہُ مِنْ فَضْلِہ ھُوَ خَیْرًا لَّھُمْ ۭ بَلْ ھُوَ شَرٌّ لَّھُمْ ۭ سَیُطَوَّقُوْنَ مَا بَخِلُوْا بِہٖ یَوْمَ الْقِیٰمَةِ}(سورہ آل عمران:180) ’’جن لوگوں کو اللہ نے اپنے فضل سے مال و دولت دی ہے اور وہ بخیلی سے کام لیتے ہیں اس خیال میں نہ رہیں کہ یہ بخل ان کے حق میں بہتر ہے،بلکہ یہ ان کے لئے بہت برا ہے،اس بخل سے جو کچھ وہ جمع کر رہے ہیں اسے قیامت کے دن طوق بنا کر ان کے گلے میں ڈال دیا جائے گا۔‘‘ مسئلہ نمبر:31 زکاۃادا نہ کرنے والوں کی دولت کو جہنم کی آگ میں گرم کر کے اس سے ان کے جسموں کو داغا جائے گا۔ [وَالَّذِیْنَ یَکْنِزُوْنَ الذَّہَبَ وَالْفِضَّةَ وَلَا یُنْفِقُوْنَہَا فِیْ سَبِیْلِ اللّٰہِ ۙ فَبَشِّرْہُمْ بِعَذَابٍ اَلِیْمٍ 34؀ۙیَّوْمَ یُحْمٰی عَلَیْہَا فِیْ نَارِ جَہَنَّمَ فَتُکْوٰی بِہَا جِبَاہُہُمْ وَجُنُوْبُہُمْ وَظُہُوْرُہُمْ ۭہٰذَا مَا کَنَزْتُمْ لِاَنْفُسِکُمْ فَذُوْقُوْا مَا کُنْتُمْ تَکْنِزُوْنَ] (سورۃ توبہ :35-34)