کتاب: زکوۃ کے مسائل - صفحہ 53
کر دیجئے ۔آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے انہیں سبکدوش کر دیا۔اسے طبرانی اور بزار نے روایت کیا ہے۔ مسئلہ نمبر:45 زکاۃوصول کرنے والے کو کسی زکاۃدینے والے سے تحفہ نہیں لینا چاہئے۔ عَنْ أَبِی حُمَیْدٍ السَّاعِدِیِّ، قَالَ: اسْتَعْمَلَ رَسُولُ اللہِ صَلَّی اللہُ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ رَجُلًا مِنَ الْأَسْدِ، یُقَالُ لَہُ: ابْنُ اللُّتْبِیَّةِ - قَالَ عَمْرٌو: وَابْنُ أَبِی عُمَرَ - عَلَی الصَّدَقَةِ، فَلَمَّا قَدِمَ قَالَ: ہَذَا لَکُمْ، وَہَذَا لِی، أُہْدِیَ لِی، قَالَ: فَقَامَ رَسُولُ اللہِ صَلَّی اللہُ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ عَلَی الْمِنْبَرِ، فَحَمِدَ اللہَ، وَأَثْنَی عَلَیْہِ، وَقَالَ: " مَا بَالُ عَامِلٍ أَبْعَثُہُ، فَیَقُولُ: ہَذَا لَکُمْ، وَہَذَا أُہْدِیَ لِی، أَفَلَا قَعَدَ فِی بَیْتِ أَبِیہِ، أَوْ فِی بَیْتِ أُمِّہِ، حَتَّی یَنْظُرَ أَیُہْدَی إِلَیْہِ أَمْ لَا؟ وَالَّذِی نَفْسُ مُحَمَّدٍ بِیَدِہِ، لَا یَنَالُ أَحَدٌ مِنْکُمْ مِنْہَا شَیْئًا إِلَّا جَاءَ بِہِ یَوْمَ الْقِیَامَةِ یَحْمِلُہُ عَلَی عُنُقِہِ بَعِیرٌ لَہُ رُغَاءٌ، أَوْ بَقَرَةٌ لَہَا خُوَارٌ، أَوْ شَاةٌ تَیْعِرُ ’’ ثُمَّ رَفَعَ یَدَیْہِ حَتَّی رَأَیْنَا عُفْرَتَیْ إِبْطَیْہِ، ثُمَّ قَالَ:’’اللہُمَّ، ہَلْ بَلَّغْتُ؟‘‘ مَرَّتَیْنِ۔(رَوَاہُ مُسْلِمٌ) حضرت ابو حمید ساعدی رضی اللہ عنہ کہتے ہیں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے بنو اسد(قبیلہ)کے ایک شخض ابن لتبیہ نامی کو(عامل مقرر فرمایا،حضرت عمرو رضی اللہ عنہ اور حضرت ابن ابوعمر رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اسے زکاۃ وصول کرنے کے لئے (تحصیلدار)مقرر فرمایا تھا)جب وہ شخص واپس آیا توکہنے لگا’’یہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کا (یعنی بیت المال کا)حصہ ہے اور یہ میرا حصہ ہے ،جو مجھے بطور تحفہ دیا گیا(یہ سن کر)رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم منبر پر تشریف لائے،اللہ تعالیٰ کی حمد و ثنا کی اور پھر فرمایا’’اس تحصیلدار کا معاملہ کیسا ہے جسے میں نے زکاۃوصول کرنے کے لئے بھیجااور(واپس آ کر)کہتا ہے یہ تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم کا مال ہے اور یہ مجھے بطور تحفہ دیا گیا ہے وہ اپنے باپ یا ماں کے گھر کیوں نہ بیٹھا رہا پھر دیکھتا کہ اسے تحفہ ملتا ہے یا نہیں،قسم ہے اس ذات کی جس کے ہاتھ میں محمد صلی اللہ علیہ وسلم کی جان ہے کہ تم میں سے جو شخص اس طرح سے کوئی مال لے گا(یعنی تحفہ وغیرہ کے نام پر)تو وہ قیامت کے دن اپنی گردن پر اٹھا کر لائے گا اونٹ ہو گا تو وہ بلبلاتا ہو گا۔گائے ہو گی تو وہ ڈکارتی ہو گی۔بکری ہو گی تو وہ ممیاتی ہو گی ۔پھر آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنے دونوں ہاتھ اوپر اٹھائے حتی کہ ہمیں آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی بغلوں کی سفیدی نظرآ گئی آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے دو مرتبہ فرمایا’’یا اللہ!میں نے (تیرا حکم)پہنچا دیا ۔‘‘اسے مسلم نے روایت کیاہے