کتاب: زکوۃ کے مسائل - صفحہ 58
مسئلہ نمبر:56 قدرتی ذرائع سے سیراب ہونے والی زمین کی پیداوار کے لئے شرح زکاۃدسواں حصہ (عشر)ہے۔ مسئلہ نمبر:57 مصنوعی ذرائع(کنواں،ٹیوب ویل،نہر وغیرہ)سے سیراب ہونے والی زمین کی پیداوار کے لئے شرح زکاۃبیسواں حصہ (نصف عشر) ہے۔ عَنْ عَبْدِاللّٰہِ بْنِ عُمَرَ رَضِیَ اللّٰہُ عَنْہُمَا عَنِ النَّبِیِّ صلی اللہ علیہ وسلم قَالَ ’’ فِیْمَا سَقَتِ السَّمَائُ وَالْعُیُوْنُ اَوْ کَانَ عَثَرِیًّا الْعُشْرُ وَمَا سُقِیَ بِالنَّضْحِ نِصْفُ الْعُشْرِ‘‘( رَوَاہُ الْبُخَارِیُّ) حضرت عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم سے روایت کرتے ہیں کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا’’جس زمین کو بارش یا چشمے پانی پلائیں یا زمین تروتازہ ہو اس کی پیداوار سے دسواں حصہ زکاۃہے اور جس زمین کو کنویں کے ذریعے پانی دیاجائے اس میں نصف عشر (یعنی بیسواں حصہ)زکاۃہے۔‘‘اسے بخاری نے روایت کیاہے۔ مسئلہ نمبر:58 کھجوروں اور انگوروں کی زکاۃادا کرنے کے لئے خرص کا طریقہ اختیار کرنے کا حکم ہے۔ مسئلہ نمبر:59 کھجوروں کی زکاۃخشک کھجوروں سے اور انگوروں کی زکاۃخشک انگور سے ادا کرنی چاہئے۔ عَنْ عَتَّابِ بْنِ اَسِیْدٍ رضی اللہ عنہ أَنَّ النَّبِیَّ صَلَّی اللَّہُ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ قَالَ فِی زَکَاةِ الکُرُومِ: ’’إِنَّہَا تُخْرَصُ کَمَا یُخْرَصُ النَّخْلُ، ثُمَّ تُؤَدَّی زَکَاتُہُ زَبِیبًا کَمَا تُؤَدَّی زَکَاةُ النَّخْلِ تَمْرًا‘‘(رَوَاہُ التِّرْمِذِیُّ) (حسن) حضرت عتاب بن اسید رضی اللہ عنہ سے روایت ہے نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے انگور کی زکاۃ(اسی طرح)خرص کے طریقہ سے ادا کرنے کا حکم دیا ہے جس طرح کھجوروں کی زکاۃخرص کے طریقہ سے ادا کی جاتی ہے۔نیز انگور کی زکاۃکشمش سے ادا کی جائے۔جس طرح تر کھجوروں کی خشک کھجوروں سے دی جاتی ہے۔‘‘اسے ترمذی نے روایت کیا ہے۔