کتاب: زکوۃ کے مسائل - صفحہ 61
مسئلہ نمبر:68 61 سے لے کر75اونٹوں تک چار سال کی اونٹنی دینی چاہئے۔ مسئلہ نمبر:69 76 سے لے کر 90اونٹوں تک دو دو برس کی دو اونٹنیاں دینی چاہئیں۔ مسئلہ نمبر:70 91 سے لے کر120 اونٹوں تک تین تین برس کی دو اونٹنیاں دینی چاہئیں۔ مسئلہ نمبر:71 120 سے زائد تعداد ہو تو ہر چالیس اونٹوں پر دو برس کی اونٹنی اور ہر پچاس اونٹوں پر تین سال کی ایک اونٹنی ادا کرنی چاہئے۔ مسئلہ نمبر:72 کوئی شخص نصاب سے کم مال ہونے کے باوجود زکاۃادا کرنا چاہے تو کر سکتا ہے۔ عَنْ اَنَسٍ رضی اللہ عنہ اَنَّ اَبَابَکْرٍ رضی اللہ عنہ کَتَبَ لَہُ ہٰذَا الْکتِاَبَ لَمَّا وَجَّہَہُ اِلَی الْبَحْرَیْنِ بِسْمِ اللّٰہِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِیْمِ ہٰذِہٖ فَرِیْضَۃُ الصَّدَقَۃِ الَّتِیْ فَرَضَ رَسُوْلُ اللّٰہِ صلی اللہ علیہ وسلم عَلَی الْمُسْلِمِیْنَ وَالَّتِیْ اَمَرَ اللّٰہُ بِہَا رَسُوْلَہٗ فَمَنْ سُئِلَہَا مِنَ الْمُسْلِمِیْنَ عَلٰی وَجْہِہَا فَلْیُعْطِہَا وَمَنْ سُئِلَ فَوْقَہَا فَلاَ یُعْطِ فِیْ اَرْبَعٍ وَّعِشْرِیْنَ مِنَ الْاِبِلِ فَمَا دُوْنَہَا مِنَ الْغَنَمِ مِنْ کُلِّ خَمْسٍ شَاۃٌ فَاِذَا بَلَغَتْ خَمْسًا وَعِشْرِیْنَ اِلَی خَمْسٍ وَّثَلاَثِیْنَ فَفِیْہَا بِنْتُ مَخَاضٍ اُنْثٰی فَاِذَا بَلَغَتْ سِتًّا وَّثَلاَثِیْنَ اِلٰی خَمْسٍ وَّاَرْبَعِیْنَ فَفِیْہَا بِنْتُ لَبُوْنٍ اُنْثٰی فَاِذَا بَلَغَتْ سِتًّا وَاَرْبَعِیْنَ اِلَی سِتِّیْنَ فَفِیْہَا حِقَّۃٌ طَرُوْقَۃُ الْجَمَلِ فَاِذَا بَلَغَتْ وَاحِدَۃً وَّسِتِّیْنَ اِلَی خَمْسٍ وَّسِبْعِیْنَ فَفِیْہَا جَذَعَۃٌ فَاِذَا بَلَغَتْ یَعْنِی سِتًّا وَّ سَبْعِیْنَ اِلَی تِسْعِیْنَ فَفِیْہَا بِنْتَا لَبُوْنٍ اُنْثٰی فَاِذَا بَلَغْتَ اِحْدَی وَتِسْعِیْنَ اِلَی عِشْرِیْنَ وَمِائَۃٍ فَفِیْہَا حِقَّتَانِ طَرُوْقَتَا الْجَمَلِ فَاِذَا زَادَتْ عَلٰی عِشْرِیْنَ وَمِائَۃٍ فَفِیْ کُلِّ اَرْبَعِیْنَ بِنْتُ لَبُوْنٍ وَفِیْ کُلِّ خَمْسِیْنَ حِقَّۃٌ وَمَنْ لَّمْ یَکُنْ مَّعَہٗ اِلاَّ اَرْبَعٌ مِنَ الْاِبِلِ فَلَیْسَ فِیْہَا صَدَقَۃٌ اِلاَّ اَنْ یَّشَائَ رَبُّہَا فَاِذَا بَلَغَتْ خَمْسًا مِّنَ الْاِبِلِ فَفِیْہَا شَاۃٌ وَفِی الصَّدَقَۃِ الْغَنَمِ فِیْ سَائِمَتِہَا اِذَا کَانَتْ اَرْبَعِیْنَ اِلَی عِشْرِیْنَ وَمِائَۃٍ شَاۃٌ فَاِذَا زَادَتْ عَلٰی عِشْرِیْنَ وَمِائَۃٍ اِلَی مِائَتَیْنِ شَاتَانِ فَاِذَا زَادَتْ عَلٰی مِائَتَیْنِ اِلَی ثَلاَثَ مِائَۃٍ فَفِیْہَا ثَلاَثُ شِیَاہٍ فَاِذَا زَادَتْ عَلٰی ثَلاَثِ مِائَۃٍ فَفِیْ کُلِّ مِائَۃٍ شَاۃٌ فَاِذَا کَانَتْ سَائِمَۃُ الرَّجُلِ نَاقِصَۃً مِنْ اَرْبَعِیْنَ شَاۃً وَاحِدَۃً فَلَیْسَ فِیْہَا صَدَقَۃٌ اِلاَّ اَنْ یَّشَائَ رَبُّہَا وَفِی الرِّقَّۃِ رُبْعُ الْعُشْرِ فَاِنْ لَّمْ تَکُنْ اِلاَّ تِسْعِیْنَ وَمِائَۃً فَلَیْسَ فِیْہَا شَیْئٌ اِلاَّ اَنْ یَّشَائَ رَبُّہَا ۔(رَوَاہُ الْبُخَارِیُّ)