کتاب: زکوۃ کے مسائل - صفحہ 73
مسئلہ نمبر:97 زکاۃکو تمام مصارف میں تقسیم کرنا ضروری نہیں۔ عَنْ اَبِیْ ہُرَیْرَۃَ رضی اللہ عنہ قَالَ : بَیْنَمَا نَحْنُ جُلُوسٌ عِنْدَ النَّبِیِّ صَلَّی اللہُ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ، إِذْ جَاءَہُ رَجُلٌ فَقَالَ: یَا رَسُولَ اللَّہِ ہَلَکْتُ. قَالَ: ’’مَا لَکَ؟‘‘قَالَ: وَقَعْتُ عَلَی امْرَأَتِی وَأَنَا صَائِمٌ، فَقَالَ رَسُولُ اللَّہِ صَلَّی اللہُ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ: ’’ہَلْ تَجِدُ رَقَبَةً تُعْتِقُہَا؟‘‘قَالَ: لاَ، قَالَ:’’فَہَلْ تَسْتَطِیعُ أَنْ تَصُومَ شَہْرَیْنِ مُتَتَابِعَیْنِ‘‘، قَالَ: لاَ، فَقَالَ: ’’فَہَلْ تَجِدُ إِطْعَامَ سِتِّینَ مِسْکِینًا‘‘. قَالَ: لاَ، قَالَ: فَمَکَثَ النَّبِیُّ صَلَّی اللہُ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ، فَبَیْنَا نَحْنُ عَلَی ذَلِکَ أُتِیَ النَّبِیُّ صَلَّی اللہُ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ بِعَرَقٍ فِیہَا تَمْرٌ - وَالعَرَقُ المِکْتَلُ - قَالَ: ’’أَیْنَ السَّائِلُ؟‘‘فَقَالَ: أَنَا، قَالَ:’’خُذْہَا، فَتَصَدَّقْ بِہِ‘‘ فَقَالَ الرَّجُلُ: أَعَلَی أَفْقَرَ مِنِّی یَا رَسُولَ اللَّہِ؟ فَوَاللَّہِ مَا بَیْنَ لاَبَتَیْہَا - یُرِیدُ الحَرَّتَیْنِ - أَہْلُ بَیْتٍ أَفْقَرُ مِنْ أَہْلِ بَیْتِی، فَضَحِکَ النَّبِیُّ صَلَّی اللہُ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ حَتَّی بَدَتْ أَنْیَابُہُ، ثُمَّ قَالَ: ’’أَطْعِمْہُ أَہْلَکَ‘‘(مُتَّفَقٌ عَلَیْہِ) حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ ہم نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس بیٹھے تھے کہ ایک صحابی آیا اور کہنے لگا ’’یا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم میں ہلاک ہو گیا ۔نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے پوچھا ’’کیا بات ہے؟‘‘ اس نے کہا ’’میں روزے کی حالت میں بیوی سے صحبت کر بیٹھا ہوں ۔‘‘رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے پوچھا’’کیا تو ایک غلام آزاد کر سکتا ہے؟‘‘ اس نے کہا’’نہیں۔‘‘ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے پھر دریافت فرمایا ’’کیا دو ماہ کے مسلسل روزے رکھ سکتے ہو؟‘‘ اس نے عرض کیا’’نہیں۔‘‘ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے پھر پوچھا’’کیا ساٹھ مسکینوں کو کھانا کھلا سکتے ہو؟‘‘ اس نے عرض کیا’’نہیں۔‘‘ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا’’اچھا بیٹھ جاؤ ۔‘‘نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم تھوڑی دیر رکے، ہم ابھی اسی حالت میں بیٹھے تھے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت میں (زکاۃ)کی کھجوروں کا ایک عرق لایا گیا، عرق بڑے ٹوکرے کو کہاجاتا ہے۔نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا ’’یہ کھجوریں لے جا اور صدقہ کر دے۔‘‘ اس نے عرض کیا ’’یارسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کیا صدقہ اپنے سے زیادہ محتاج لوگوں کو دوں؟ واللہ !مدینہ کی ساری آبادی میں کوئی گھر میرے گھر سے زیادہ محتاج نہیں ۔‘‘رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ہنس دیئے یہاں تک کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی داڑھیں نظر آنے لگیں۔نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا’’اچھا جاؤ اپنے گھر والوں کو ہی کھلا دو ۔‘‘اسے بخاری اور مسلم نے روایت کیا ہے۔