کتاب: زکوۃ کے مسائل - صفحہ 77
ذَمُّ الْمَسْئَـــــلَۃِ سوال کرنے کی مذمت مسئلہ نمبر:105 بے جا سوال کرنے سے بچنا چاہئے۔ عَنْ حَکِیْمِ بْنِ حَزَامٍ رضی اللہ عنہ عَنِ النَّبِیِّ صلی اللہ علیہ وسلم قَالَ ’’الیَدُ العُلْیَا خَیْرٌ مِنَ الیَدِ السُّفْلَی، وَابْدَأْ بِمَنْ تَعُولُ، وَخَیْرُ الصَّدَقَةِ عَنْ ظَہْرِ غِنًی، وَمَنْ یَسْتَعْفِفْ یُعِفَّہُ اللَّہُ، وَمَنْ یَسْتَغْنِ یُغْنِہِ اللَّہُ». رَوَاہُ الْبُخَارِیُّ حکیم بن حزام رضی اللہ عنہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم سے روایت کرتے ہیں ’’اوپر کا ہاتھ نیچے کے ہاتھ سے بہتر ہے،پہلے اپنے بال بچوں عزیزوں کو دو اور عمدہ خیرات وہی ہے جس کو دے کر آدمی مالدار رہے اور جو کوئی سوال کرنے سے بچنا چاہے گااللہ تعالیٰ اس کو بچائے گا اور جو کوئی بے پرواہی کی دعا کرے،اللہ تعالیٰ اسے بے پرواہ کر دے گا۔‘‘اسے بخاری نے روایت کیا ہے۔ وَ عَنِ الزُّبَیْرِ بْنِ الْعَوَامِ رضی اللہ عنہ عَنِ النَّبِیِّ صلی اللہ علیہ وسلم قَالَ ’’لَأَنْ یَأْخُذَ أَحَدُکُمْ حَبْلَہُ، فَیَأْتِیَ بِحُزْمَةِ الحَطَبِ عَلَی ظَہْرِہِ، فَیَبِیعَہَا، فَیَکُفَّ اللَّہُ بِہَا وَجْہَہُ خَیْرٌ لَہُ مِنْ أَنْ یَسْأَلَ النَّاسَ أَعْطَوْہُ أَوْ مَنَعُوہُ‘‘(رَوَاہُ الْبُخَارِیُّ) حضرت زبیر بن عوام رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا’’تم میں سے کوئی اپنی رسی لے کر (جنگل جائے)اور لکڑیوں کا ایک گٹھا اپنی پیٹھ پر اٹھا کر لائے پھر اسے بیچے اور اس کے سبب اللہ تعالیٰ اس کی آبرو رکھے،(ایسا کرنا)بہت بہتر ہے سوال کرنے سے (کیا معلوم)لوگ اسے دیں یا نہ دیں۔‘‘اسے بخاری نے روایت کیا ہے۔