کتاب: زکوۃ کے مسائل - صفحہ 91
ماجہ نے روایت کیا ہے۔ مسئلہ نمبر:141 غلطی سے زکاۃصدقہ غیر مستحق یا فاسق آدمی کو دے دیا جائے تب بھی اس کا پورا ثواب مل جاتا ہے۔ عَنْ أَبِی ہُرَیْرَةَ، عَنِ النَّبِیِّ صَلَّی اللہُ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ قَالَ: ’’قَالَ رَجُلٌ لَأَتَصَدَّقَنَّ اللَّیْلَةَ بِصَدَقَةٍ، فَخَرَجَ بِصَدَقَتِہِ فَوَضَعَہَا فِی یَدِ زَانِیَةٍ، فَأَصْبَحُوا یَتَحَدَّثُونَ تُصُدِّقَ اللَّیْلَةَ عَلَی زَانِیَةٍ، قَالَ: اللہُمَّ، لَکَ الْحَمْدُ عَلَی زَانِیَةٍ، لَأَتَصَدَّقَنَّ بِصَدَقَةٍ، فَخَرَجَ بِصَدَقَتِہِ فَوَضَعَہَا فِی یَدِ غَنِیٍّ، فَأَصْبَحُوا یَتَحَدَّثُونَ: تُصُدِّقَ عَلَی غَنِیٍّ، قَالَ: اللہُمَّ، لَکَ الْحَمْدُ عَلَی غَنِیٍّ، لَأَتَصَدَّقَنَّ بِصَدَقَةٍ، فَخَرَجَ بِصَدَقَتِہِ فَوَضَعَہَا فِی یَدِ سَارِقٍ، فَأَصْبَحُوا یَتَحَدَّثُونَ:تُصُدِّقَ عَلَی سَارِقٍ، فَقَالَ: اللہُمَّ، لَکَ الْحَمْدُ عَلَی زَانِیَةٍ، وَعَلَی غَنِیٍّ، وَعَلَی سَارِقٍ، فَأُتِیَ فَقِیلَ لَہُ: أَمَّا صَدَقَتُکَ فَقَدْ قُبِلَتْ، أَمَّا الزَّانِیَةُ فَلَعَلَّہَا تَسْتَعِفُّ بِہَا عَنْ زِنَاہَا، وَلَعَلَّ الْغَنِیَّ یَعْتَبِرُ فَیُنْفِقُ مِمَّا أَعْطَاہُ اللہُ، وَلَعَلَّ السَّارِقَ یَسْتَعِفُّ بِہَا عَنْ سَرِقَتِہِ‘‘(رَوَاہُ مُسْلِمٌ) حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا’’ایک آدمی نے کہا’’میں آج کی رات صدقہ دوں گا۔‘‘وہ اپنا صدقہ لے کر نکلا اور ایک زانیہ عورت کے ہاتھ میں دے دیا۔صبح کو لوگ چرچا کرنے لگے کہ رات ایک زانیہ کو صدقہ دیا گیا ہے۔ اس نے کہا’’اے اللہ!تعریف تیرے ہی لئے ہے میرا صدقہ زانیہ کو مل گیا ۔اس نے کہا’’کہ میں آج رات پھر صدقہ کروں گا۔‘‘ وہ صدقہ لے کر نکلا اور ایک مال دار کو دے دیا۔لوگوں نے باتیں کیں کہ آج کوئی مال دار کو صدقہ دے گیا۔اس نے کہا’’اے اللہ!تعریف تیرے ہی لئے ہے میرا صدقہ مال دار کے ہاتھ لگ گیا ہے،میں آج پھر صدقہ دوں گا ۔‘‘وہ صدقہ لے کر نکلا اور ایک چور کے ہاتھ میں دے دیا۔صبح لوگوں نے کہنا شروع کر دیا ’’رات کسی نے چور کے ہاتھ میں صدقہ دے دیا۔‘‘ اس نے کہا کہ’’اے اللہ!تعریف تیرے ہی لئے ہے۔میرا صدقہ زانیہ،غنی اور چور کے ہاتھ لگ گیا۔‘‘ پس اسے (خواب میں) کہا گیا ’’تیرے سب صدقے قبول ہو گئے ،زانیہ کو اس لئے کہ شاید وہ زنا سے بچ جائے،غنی کو اس لئے کہ شاید اسے شرم آئے اور عبرت ہو اور چور کو اس لئے کہ شاید وہ چوری سے باز آ جائے ۔‘‘اسے مسلم نے روایت کیا ہے۔