کتاب: زکوۃ کے مسائل - صفحہ 95
أَ لْآحَادِیْثُ الضَّعِیْفَۃُ وَالْمَوْضُوْعَۃُ ضعیف اور موضوع احادیث (1) فِی الرِّکَازِ الْعُشْرِ ’’رکاز (دفن شدہ خزانہ)میں دسواں حصہ زکاۃہے۔‘‘ وضاحت : یہ حدیت ضعیف ہے۔تفصیل کے لئے ملاحظہ ہو۔الفوائد المجموعہ فی الاحادیت الموضوعہ حدیت نمبر 175 (2) لَیْسَ فِی الْحُلِیِّ زَکَاۃٌ ’’زیور میں زکاۃنہیں ہے۔‘‘ وضاحت : یہ حدیث بے اصل ہے۔بحوالہ سابقہ حدیث نمبر 178 (3) اَعْطُوا السَّائِلَ وَ اِنْ جَائَ عَلٰی فَرَسٍ ’’سوالی کو کچھ دو خواہ وہ گھوڑے پر سوار ہو کر ہی آئے۔‘‘ وضاحت : یہ حدیث موضوع ہے۔بحوالہ سابق حدیث نمبر 187 (4) مَنْ لَمْ یَکُنْ عِنْدَہٗ صَدَقَۃٌ فَلْیَلْعَنِ الْیَہُوْدَ فَإِنَّہَا صَدَقَۃٌ ’’جس کے پاس صدقہ دینے کے لئے کچھ نہ ہو وہ یہودیوں پر لعنت کرے ( اس کی طرف سے) یہی صدقہ ہو گا۔‘‘ وضاحت : یہ حدیث ضعیف ہے ۔بحوالہ سابق حدیث نمبر 190 (5) مَنْ قَضَی لِمُسْلِمٍ حَاجَۃً مِنْ حَوَائِجِ الدُّنْیَا قَضَی اللّٰہُ لَہُ اثْنَیْنِ وَ سَبْعِیْنَ حَاجَۃً اَسْہَلُہَا الْمَغْفِرَۃُ ’’جس نے دنیا میں کسی محتاج کی حاجت پوری کی اللہ تعالیٰ اس کی بہتر (72)حاجتیں پوری فرمائے گا جن میں سے سب سے کم تر درجہ کی حاجت مغفرت ہو گی۔‘‘ وضاحت : یہ حدیث ضعیف ہے ۔بحوالہ سابق حدیث نمبر 203 (6) مَنْ رَبّٰی صَبِیًّا حَتّٰی یَقُوْلَ لاَ اِلٰہَ اِلاَّ اللّٰہُ لَمْ یُحَاسِبْہُ اللّٰہُ