کتاب: مقالات محدث مبارکپوری - صفحہ 229
ثبت عن احمد بن حبنل انہ قال لا اعلم فی التسمیۃ ای فی الوضو حدیثا ثابتا قلت لا یلزم من نفی العلم ثبوت العدم وعلی التنزل لا یلزم من نفی الثبوت ثبوت الضعف لا حتمال ان یراد بالثبوت الصحۃ فلا ینتفی الحسن وعلی التنزل لا یلزم من نفی الثبوت عن کل فردتقیہ عن المجموع انتھٰی۔ اما م احمد رحمۃ اللہ علیہ سے یہ ثابت ہے کہ انھوں نے کہا ہے کہ وضو کرتے وقت بسم اللہ کہنے کے بارے میں کوئی حدیث ثابت میں نہیں جانتا ۔ حافظ ابن حجر کہتے ہیں کسی چیز کے متعلق علم نہ ہونا اس بات پر دلالت نہیں کرتا کہ اس کا وجود ہی نہیں۔ اور اگر ایک لمحہ کے لیے اسے تسلیم بھی کر لیا جائے تب بھی یہ بات لازم نہیں آتی کہ ثبوت کی نفی سے ضعف ثابت ہو جائے کیونکہ اس بات کا احتمال ہے کہ لفظ ’’ثبوت‘‘ سے مراد صحت ہو نہ کہ حسن ، اور پھر اس سے بھی بڑھ