کتاب: مسئلہ حیاۃ النبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم - صفحہ 11
ہندوستان کی تحریک تجدید: ہندوستان کی تحریک احیاوتجدید جس کی ابتداء حضرت سید احمد سرہندی نے فرمائی اور اس کی تکمیل شاہ اسماعیل شہید رحمۃ اللہ علیہ اور ان کے رفقاء نے فرمائی۔ ابتدا میں علمی اور اصلاحی تھی۔ علماء سوء اور انگریز کے منحوس وفاق نے اسے مجبورًا سیاست میں دھکیل دیا سکھوں کی حماقت نے اتقیاء کی اس جماعت کو مجبور کردیا کہ وہ جنت کی آگ میں کودیں اور اپنی قیمتی زندگیاں حق کی راہ میں قربان کریں پھر گمراہ کن فتووں کی سیاہی نے ملت کے چہرے کو اس قدر بدنما کردیا تھا کہ اسے دھونے کے لیے شہادت کے خون کے علاوہ پانی کے تمام ذخیرے بیکار ہوچکے تھے۔ وہابیت کی تہمت مستعار نے ذہن ماؤف کردیے تھے، الحاد کا گرد اِن پر اس قدر جم چکا تھا کہ اسے صاف کرنے کے لیےصرف شہداء کا خون ہی کار آمد ہوسکتا تھا۔ چنانچہ مئی ۱۸۳۱ء کی صبح کو یہ مقدس جماعت انتہائی کوشش اور ممکن تیاری کے ساتھ بالا کوٹ کے میدان میں اتری اور دوپہر سے پہلے صدقات کے نہ مٹنے والے نشان دنیا کی پیشانی پر ثبت کرنے کے بعد ہمیشہ کی نیند سو گئی۔ ولاتقولو المن یقتل فی سبیل للہ اموات بل احیاء ولٰکن لاتشعرون ۔