کتاب: مسئلہ حیاۃ النبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم - صفحہ 56
عظام کی تابوت اور تابوت کی عظام سے تعبیر میں استبعاد نہیں ایسے مقام پر عظام سے جسم مراد لینا متعارف ہے۔ قرآن حکیم نے منکرین حشرکا عقیدہ ان الفاظ میں ذکر فرمایا ہے مَن یُحْیِی الْعِظَامَ وَہِیَ رَمِیمٌ )بوسیدہ ہڈیوں کو کون زندگی عطا کرے گا) معلوم ہے کہ کفار حشر اجساد کے منکر تھے حشر عظام پر استعجاب اسی حقیقت کی تعبیر ہے مقصود یہی ہے من یحیی الاجسام النالیہ حدیث من فلحتمل عظامہ سے مراد احتمل جسمہ ہی ہونا چاہیئے اس مفہوم کے بعد احادیث میں تعارض اُٹھ جاتا ہے میری دانست میں وہی مسلک صحیح ہے جسے ائمہ سنت وحدیث نے قبول فرمایا ہے۔ ۷۔ ابن خلدون کا حوالہ اور بھی محل نظر ہے کیونکہ مصر سے تو حضرت یوسف علیہ السلام کی نعش مبارک حضرت موسیٰ علیہ السلام اپنے ہمراہ لائے بنی اسرائیل چالیس سال تک بادیہ تیہ میں اقامت پزیر رہے کوشش اور انتہائی آرزو کے باوجود بنی اسرائیل کسی ہمسایہ ملک پر حملہ کرنے کے لیے تیار نہ ہوئے حضرت موسیٰ علیہ السلام اور حضرت ہارون علیہ السلام کا انتقال اسی اثناء میں ہوا اس کے بعد بنی اسرائیل کی قیادت یوشع بن نون کے سپردہوئی حضرت یوشع نے ریحا اور نابلس کے علاقے فتح ہوئے خیال ہے کہ اس اثناء میں برسوں گزر گئے ہوں گے ابن خلدون نے بنی اسرائیل کے مصر سے خروج کا ذکر کرتے ہوئے لکھا ہے واخر بوا معھم تابوت یوسف علیہ السلام (ص۱۲۳ جلد۱) تابوت اور شلوا ابن خلدون نے دونوں استعمال کیے ہیں مسعودی نے ایک روایت میں تابوت کی شکل بھی بتائی ہے(ص۴۷ جلد۱(قبض اللہ یوسف بمصر ولہ مائۃ وعشرون سنۃ وجعل فی تابوت المرخام وسد بالرصاص وطی باالاخیۃ النافعۃ للھواء والماء۔ حضرت یوسف علیہ السلام کے لیے سفید پتھر کا تابوت بنایا گیا اور ہوا اور پانی کی بندش پورا انتظام کیا گیا۔ معلوم نہیں اس وقفہ میں حضرت یوسف علیہ السلام کی عظام یاتابوت کو وادی "تیہ" دفن کیا گیا اور دوبارہ نکال حسب وصیت نایلس میں دفن کیا گیا تفصیلات کیلئے تاریخ خاموش ہے اور جو مواد ملتا ہے وہ قریباً اسرائیلی روایات ہیں جن کی بنا پر ترجیح دینا مشکل ہے ہے جمہور امت نے جو رائے قبول کی ہے روایات میں ضعف کے باوجود وہی راجح معلوم ہوتی ہے سارے واقعات اخباری انداز کے ہیں ان کا انداز احادیث اور محدثین کی ہمسری نہیں ابو القاسم سہیلی بعض شہداء احداورصلحاء کے اجسام کا ذکر فرماتے ہین کہ وہ کئی سال کے بعد اپنی قبروں سے صحیح سالم بر آمد ہوئے اور دوسری جگہ دفن کیے گئے ، اس کے بعد فرماتے ہیں ۔ والا اخبار بذلک صحیحۃ)روض الانف ص۳۴ جلد۱) ۔ پھر فرماتے ہیں۔ قال علیہ السلام ان اللہ حرم علی الارض ان تاکل اجساد الانبیاء اخرجہ سلیمان بن اشعت وذکر ابو جعفر الدٰودی فی کتاب التاسی ھٰذاالحدیث بذیادۃ وذکر الشھداء والعلماء والموذنین وھی زیادۃ غریبۃ لم تقع (لی) فی مسند غیر ان الدٰودی من اھل الثقۃ والحلم ۔ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا : اللہ تعالیٰ نے انبیاء علیہم السلام کے اجسام زمین پر حرام فرما دیے ہیں سلیمان بن اشعت نے اسے تخریج فرمایا ہے ابو جعفر داودی نے اس حدیث میں شہداء علماء اور موذنین کا بھی اضافہ کیا ہے اس زیارت میں بے شک غرابت ہے لیکن داودی عالم اور ثقہ ہیں۔