کتاب: نماز میں ہاتھ باندھنے کا حکم اور مقام - صفحہ 11

  عبدالرحمن بن اسحاق الکوفی علمائے اسماء الرجال کی نظر میں ۱۔ ابوزرعہ الرازی نے کہا: لیس بالقوی (الجرح والتعدیل ۲۱۳/۵( ۲۔ ابو حاتم الرازی نے کہا: ھوضعیف الحدیث ، منکر الحدیث یکتب حدیثہ ولا یحتج بہ (الجرح والتعدیل ۲۱۳/۵( ۳۔ ابن خزیمہ نے کہا: ضعیف الحدیث (کتاب التوحید ص ۲۲۰( ۴۔ ابن معین نے کہا: ضعیف ، لیس بشیء (الجرح والتعدیل ۲۱۳/۵ وسندہ صحیح ، تاریخ ابن معین ۱۵۵۹، ۳۰۷۰( ۵۔ احمد بن حنبل نے کہا: منکر الحدیث ( کتاب الضعفاء للبخاری ۲۳، التاریخ الکبیر ۲۵۹/۵( ۶۔ بزار نے کہا: لیس حدیثہ حدیث حافظ(کشف الاستار: ۸۵۹( ۷۔ یعقوب بن سفیان نے کہا: ضعیف (کتاب المعرفۃ والتاریخ ۵۹/۳( ۸۔ عقیلی نے کہا: ذکرہ فی کتاب الضعفاء(۳۲۲/۲( ۹۔ العجلی نے کہا: ضعیف جائز الحدیث یکتب حدیثہ (تاریخ العجلی : ۹۳۰( ۱۰۔ بخاری نے کہا: ضعیف الحدیثاور کہا:اور کہا:اور کہا:فیہ نظر (الکامل لابن عدی۱۶۱۳/۴ وسندہ صحیح) ۱۱۔ نسائی نے کہا: ضعیفاور کہا: اور کہا: اور کہا: لیس بثقۃ۱۲۔ ابن سعد نے کہا: ضعیف الحدیث (طبقات ابن سعد ۳۶۱/۶( ۱۳۔ ابن حبان نے کہا۱۲۔ ابن سعد نے کہا: ضعیف الحدیث (طبقات ابن سعد ۳۶۱/۶( ۱۳۔ ابن حبان نے کہا۱۲۔ ابن سعد نے کہا: ضعیف الحدیث (طبقات ابن سعد ۳۶۱/۶( ۱۳۔ ابن حبان نے کہا: کان ممن یقلب الاخبار والاسانید وینفرد بالمناکیر عن المشاھیر ، لا یحل الاحتجاج بخیر ۱۶۔ ابن جوزی نے اس کو الضعفاء والمتروکین میں ذکر کیا اور کہا: "وویحدث عن النعمان عن المغیرۃ احادیث مناکیراور کہا: "اور کہا: "اور کہا: "المتھم بہ عبدالرحمٰن بن اسحاق۱۷۔ الذہبی نے کہا: ۱۷۔ الذہبی نے کہا: ۱۷۔ الذہبی نے کہا: ضعفوہ (الکاشف ج ۲ ص ۲۶۵( ۱۸۔ ابن حجر نے کہا: کوفی ضعیفاس تفصیل سے معلوم ہواکہ عبدالرحمٰن بن اسحاق جمہور محدثین کرام کے نزدیک ضعیف و مجروح ہے بعض نے اس کو متہم اور متروک بھی کہا لہٰذا اس کی روایت مردود ہے۔ اس تفصیل سے معلوم ہواکہ عبدالرحمٰن بن اسحاق جمہور محدثین کرام کے نزدیک ضعیف و مجروح ہے بعض نے اس کو متہم اور متروک بھی کہا لہٰذا اس کی روایت مردود ہے۔

  • فونٹ سائز:

    ب ب