کتاب: نماز میں ہاتھ باندھنے کا حکم اور مقام - صفحہ 41

نصرالرب فی توثیق سماک بن حرب جارحین اور ان کی جرح جارحین اور ان کی جرح جارحین اور ان کی جرح * شعبہ: قال یحیٰ بن معین : "سماک بن حرب ثقۃ وکان شعبۃ یضعفہ"۔۔۔ الخ (تاریخ بغداد ۲۱۵/۹ ت ۴۷۹۲( ابن معین ۱۵۷ھ میں پیدا ہوئے اور شعبہ بن الحجاج ۱۶۰ھ میں فوت ہوئے یعنی یہ روایت منقطع ہونے کی وجہ سے مردود ہے۔1۔ سفیان الثوری : "کان یضعفہ بعض الضعف" امام العجلی (مولود ۱۸۲ھ متوفی ۲۶۱ھ( نے کہا: "جائز الحدیث۔۔۔۔وکان فصیحاً الا انہ کان فی حدیث عکرمۃ ربما وصل عن ابن عباس ۔۔۔۔وکان سفیان الثوری یضعفہ بعض الضعف" (تاریخ الثقات:۶۲۱وتاریخ بغداد۲۱۹/۹( سفیان الثوری ۱۶۱ھ میں فوت ہوئے تھے لہٰذا یہ سند بھی منقطع ہے، اس کے برعکس شعبہ اور سفیان دونوں سے ثابت ہے کہ وہ سماک بن حرب سے روایتیں بیان کرتے تھے لہٰذا اگر یہ جرح ثابت بھی ہوتی تو العجلی کے قول کی روشنی میں اسے "سماک عن عکرمۃ عن ابن عباس" کی سند پر محمول کیا جاتا۔ ابن عدی نے احمد بن الحسین الصوفی(؟) ثنا محمد بن خلف بن عبدالحمید کی سند کے ساتھ سفیان سے نقل کیا کہ سماک ضعیف ہے (الکامل ۱۲۹۹/۳) محمد بن خلف مذکور کے حالات نامعلوم ہیں لہٰذا یہ قول ثابت نہیں ہے۔ احمد بن حنبل: "مضطرب الھدیث" (الجرح والتعدیل ۲۷۹/۴( اس قول کے ایک راوی محمد بن حمویہ بن الحسن کی توثیق نامعلوم ہے لیکن کتاب المعرفۃ والتاریخ یعقوب الفارسی (۶۳۸/۲)میں اس کا ایک شاہد (تائید کرنے والی روایت( بھی موجود ہے۔ کتاب العلل ومعرفۃ الرجال (۱۵۴/۱، رقم : ۷۷۵) میں امام احمد کے قول: "سماک یرفعھما عن عکرمۃ عن ابن عباسجرح کا تعلق صرف "سماک عن عکرمۃ عن ابن عباس" کی سند سے ہے، نیز دیکھئے اقوال تعدیل: ۷ جرح کا تعلق صرف "سماک عن عکرمۃ عن ابن عباس" کی سند سے ہے، نیز دیکھئے اقوال تعدیل: ۷ جرح کا تعلق صرف "سماک عن عکرمۃ عن ابن عباس" کی سند سے ہے، نیز دیکھئے اقوال تعدیل: ۷ 3۔ محمد بن عبداللہ بن عمار الموصلی: "یقولون انہ کان یغلط ویختلفون فی حدیثہ"(* صالح بن محمد البغدادی: "* صالح بن محمد البغدادی: "* صالح بن محمد البغدادی: "یضعف

  • فونٹ سائز:

    ب ب