کتاب: نماز میں ہاتھ باندھنے کا حکم اور مقام - صفحہ 46

وقال: "وکان من حملۃ الحجۃ ببلدہ" (ایضاً ص ۲۴۶( 15۔ ابن حبان: احتج بہ فی صحیحہ(دیکھئے اقوال الجرح: ۴/۲( 16۔ ابن خزیمہ: صحح لہ فی صحیحہ (۸/۱ ح۸( 17۔ البغوی: قال:"حذا حدیث حسن" (شرح السنۃ ۳۱/۴ ح ۵۷۰( 18۔ نووی: حسن لہ فی المجموع شرح المھذب (۴۹۰/۳( 19۔ ابن عبدالبر: صحح لہ فی الاستیعاب (۶۱۵/۳( 20۔ ابن الجارود: ذکر حدیثہ فی المنتقیٰ(ح ۲۵( اشرف علی تھانوی دیوبندی نے ایک حدیث کے بارے میں کہا: "واورد ھذا الحدیث ابن الجارود فی المنتقیٰ فھو صحیح عندہ"بوادر النوادر ص ۱۳۵ نویں حکمت حرمت سجدہ تحیہ( 21۔ الضیاء المقدسی: احتج بہ فی المختارۃ (۱۱/۱۲۔ ۹۸ ح ۱۔۱۱۵( 22۔ المنذری: حسن لہ حدیثہ الذی رواہ الترمذی (۲۶۵۷( برمزہ "عن"(دیکھئے الترغیب والترہیب ۱۰۸/۱ ح ۱۵۰( 23۔ ابن حجر العسقلانی: "صدوق وروایتہ عن عکرمۃ خاصۃ مضطربۃ وقد تغیر باخرۃ فکان ربما یلقن"ایسی روایت حافظ ابن حجر کے نزدیک صحیح یا حسن ہوتی ہے۔" [لہٰذا یہ راوی بقول تھانوی حافظ ابن حجر کے نزدیک صحیح الحدیث یا حسن الحدیث ہیں۔"ایسی روایت حافظ ابن حجر کے نزدیک صحیح یا حسن ہوتی ہے۔" [لہٰذا یہ راوی بقول تھانوی حافظ ابن حجر کے نزدیک صحیح الحدیث یا حسن الحدیث ہیں۔"ایسی روایت حافظ ابن حجر کے نزدیک صحیح یا حسن ہوتی ہے۔" [لہٰذا یہ راوی بقول تھانوی حافظ ابن حجر کے نزدیک صحیح الحدیث یا حسن الحدیث ہیں۔[ (دیکھئے قواعد فی علوم الحدیث ص ۸۹( 24۔ ابوعوانہ: احتج بہ فی صحیحہ المستخرج علی صحیح مسلم 25۔ ابو نعیم الاصبہانی: احتج بہ فی صحیحہ المستخرج علی صحیح مسلم(۲۸۹/۱، ۲۹۰ ح ۵۳۵( 26۔ ابن سید الناس: صحح حدیثہ فی شرح الترمذ ، قالہ شیخنا الامام محمد بدیع الدین الراشدی السندیاس تفصیل سے معلوم ہوا کہ سماک بن حرب مذکور کو جمہور محدثین نے ثقہ و صدوق اور صحیح الحدیث قراردیا ہےلہٰذا ان پر بعض محدثین کی جرح مردود ہے۔ بعض علماء نے اس جرح کو اختلاط پر محمول کیا ہے یعنی اختلاط سے پہلے والی روایتوں پر کوئی جرح نہیں ہے۔ اس تفصیل سے معلوم ہوا کہ سماک بن حرب مذکور کو جمہور محدثین نے ثقہ و صدوق اور صحیح الحدیث قراردیا ہےلہٰذا ان پر بعض محدثین کی جرح مردود ہے۔ بعض علماء نے اس جرح کو اختلاط پر محمول کیا ہے یعنی اختلاط سے پہلے والی روایتوں پر کوئی جرح نہیں ہے۔

  • فونٹ سائز:

    ب ب