کتاب: روزہ حقیقت و ثمرات - صفحہ 40

ترجمہ:(اور جو نیکی تم اپنے لئے آگے بھیجو گے اسے اللہ تعالیٰ کے ہاںبہتر سے بہتر اور ثواب میں بہت زیادہ پاؤگے )(المزمل:۲۰) جب اللہ تعالیٰ فرمائے گا :{کُلُوْا وَاشْرَبُوْا ھَنِیْئًا بِمَا أَسْلَفْتُمْ فِی الْاَیَّامِ الْخَالِیَۃِ} (الحاقۃ:۲۴) ترجمہ:( مزے سے کھاؤ،پیواپنے ان اعمال کے بدلے جو تم نے گزشتہ زمانے میں کیئے)امام مجاہد کا قول ہے:’’یہ آیت روزہ داروں کے بارہ میں اتری ہے‘‘ امام وکیع فرماتے ہیں : ’’ایام خالیۃ‘‘ سے مراد ،ایامِ صوم ہیں۔‘‘ ابو نصربشر بن الحارث جن کا کبار صالحین میں شمار ہوتا تھا،اور جن کے زھد وورع کے بہت سے واقعات مشہور ہیں ،کثرت سے روزے رکھا کرتے تھے،جس رات فوت ہوئے کسی نے خواب دیکھا کہ ان کے آگے ایک بہترین دستر خوان بچھا ہے اور وہ کھانا تناول فرمارہے ہیں،اور ایک فرشتہ مسلسل کہہ رہا ہے :’’اے وہ شخص !جودنیا میں کھاتاپیتا نہیں تھا (اشارہ روزوںکی طرف ہے)خوب کھاؤ اور پیو ‘‘(صفۃ الصفوۃ

  • فونٹ سائز:

    ب ب